1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

بیویوں کے لیے

در صدف ایمان نے 'متفرق مقالات وتحاریر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ جولائی 30, 2016

  1. ‏ جولائی 30, 2016 #1
    در صدف ایمان

    در صدف ایمان رکن ختم نبوت فورم

    تحریر: در صدف ایمان

    معاشرے کا حال یہ ہو گیا ہے کہ کوئی گناہ کرے تو اس کا حال گھر کی کھڑکیوں سے نکل کر گلی گلی خواتین و مرد حضرات کی زبان پر عام ہوجاتا ہے۔ اور وہ تمام مرد و حضرات و خواتین و دوشیزائیں گناہ سے پاک ہوتی ہیں۔ کم از کم ان کے اسپیڈ میں کانوں کو چھوتے ہاتھ اور توبہ توبہ کی آواز سے زبان ہلنے سے ابرو قطب مینار کی طرح بلند ہوتے ہوئے پیشانی کی حد کو چھونے سےتو یہی محسوس ہوتا ہے۔

    یہی حال ان مظلوم بیویوں کا ہے جو شوہر کے بچے پیدا کر کے سمجھتی ہیں انہوں نے بہت بڑا احسان کر دیا ہے۔ دو شادیاں کرنے والوں کو عموماً اچھا نہیں سمجھا جاتا۔ بے چاری بیوی مظلوم ترین ہستی اور شوہر ظالم ترین ۔ اس کے اس ظلم کی داستان ہر عورت اتنے ورد بھرے انداز میں دوسری عورت کو بتاتی ہے کہ بے چاری عورت کے شوہر نے ، Sorry ظالم شوہر نے دوسری شادی کر لی ہے۔

    اب اس بے چارے ظالم ان دیکھے شوہر سے جس نے دوسری شادی کے گناہ کا ارتکاب کیا ہے، اس کے لیے منفی جذبات پیدا ہو جاتے ہیں۔ کبھی اس سے کچھ پوچھنے کا خیال آیا؟

    ہر جگہ ضروری نہیں کہ مرد ہی بے وفا یا فطرتِ بے باکا نہ ہو۔ کہیں خود بیوی کی غلطی بھی ہو سکتی ہے اور یہ غلطیاں شوہر کو ٹائم نہ دے اس کی ضرورتوں کا خیال نہ رکھ کر، مرد کی فطرت کا خیال نہ رکھ ،ا ور بھی بہت سی غلطیاں ہوتی ہیں ،،،نتیجتاً وہ مرد باہر کی طرف مائل ہو جاتا ہےپھر چاہے وہ زنا ہو یا پھر نکا ح ہو۔ سوچنے کی بات ہے کہ اس کے جواب میں خواتین کہتی ہیں ہم گھر اور بچے سنبھالتے ہیں ، اس لیے ٹائم نہیں ملتا۔میرا سوال یہ ہے کے کیا آج کی خواتین امہا ت ا لمو مینن سے زیادہ بلند ہیں

    ، امہات المؤمنین نے بھی،صحا بیات
    .....نے بھی اپنے گھر سمبھالیں ہیں .....اولاد کی پرور ش و تربیت بھی اعلیٰ کی ، آج کی تربیت نہیں۔ آج کی عورت جو ہر معاملے میں بہت سمجھ دار بنتی ہے، اس معاملے میں کیوں نہیں؟؟؟ شوہر کے بچے پیدا کر کے کوئی احسان نہیں کیا۔ جنت بھی آپکے قدموں تلے آئی۔ شوہر کے نہیں ،،،اور جو عورتیں شوہر کے سمجھا نے پر ماں کے گھر جانے کی دھمکی دیتی ہیں ،،انھیں کیا یہ نہیں معلوم کے شادی کے بعد ماں کے گھر جا کر بیھٹنے سے صرف .اور سے صرف ذلت اور بھابھیو ں کے ....نخرے . ملتے ہیں۔
    تو بہتر ہے اچھی بیویوں کی طرح گھروں کو جنت بنایا جائے اور حوروں کی طرح رہا جائے۔

    بھلائی تو اسی میں ہے باقی عورت ہوتی تو کچھ زیادہ ہی سمجھدار ہے

اس صفحے کی تشہیر