1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

(قانون سازی بنیادی عقائد کے مطابق)

محمدابوبکرصدیق نے '1974ء قومی اسمبلی کی مکمل کاروائی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ نومبر 23, 2014

  1. ‏ نومبر 23, 2014 #1
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (قانون سازی بنیادی عقائد کے مطابق)
    Mirza Nasir Ahmad: In the liht of the fundamental belief....
    (مرزاناصر احمد: قانون بنانے کا حق رکھتے ہیں بنیادی اعتقاد کے موافق…)
    98Mr. Yahya Bakhtiar: Yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں)
    Mirza Nasir Ahmad: .... of every sect.
    (مرزاناصراحمد: ہر فرقے کے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: You are going, Sir, in deatils. But, Sir, I am saying in principle you give this power to the Legislature?
    (جناب یحییٰ بختیار: جناب آپ تو تفصیل میں جارہے ہیں۔ میں اصول کی بات کر رہا ہوں کہ ان کو آپ نے یہ قانون سازی کا حق دیا ہے)
    مرزاناصر احمد: میں اس لئے Detail (تفصیل) میں جارہا ہوں کہ یہ نہ ہو کہ کل کو ہم Detail (تفصیل) بھول جائیں۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں جی نہیں۔ You can explain and add to anything which you say in answer to my question. I am not ....
    (آپ میرے سوال کے جواب میں وضاحت کر سکتے ہیں۔ اپنا جواب دیتے وقت گھٹا بڑھا سکتے ہیں)
    مرزاناصراحمد: ہوں۔ نہیں، ٹھیک ہے۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... suggesting that. But I am just saying that in principle this is a duty imposed by the Constitution?
    (جناب یحییٰ بختیار: اس وقت میں صرف یہ کہہ رہا ہوں کہ اصولی طور پر دستور نے مجلس قانون ساز پر یہ فرض عائد کیا ہے)
    (Interruption)
    مرزاناصراحمد: یہ (مائیک) کام نہیں کر رہا شاید۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: The other one?
    مرزاناصراحمد: … یا مرضی نہیں کام کر رہی، یہاں نقصان نہیں ہے۔ ٹھیک ہے، ٹھیک ہے جی۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: I am just submitting that, in principle, the Constitution has imposed a duty on the National Assembly or the Parliament, that they should see to it, by making laws, that the Musalamans live their lives in accordance with the injunctions of Quran and Sunnah?
    (جناب یحییٰ بختیار: میں یہ عرض کر رہا ہوں کہ اصولی طور پر دستور نے قومی اسمبلی پر یہ فرض عائد کیا ہے۔ یعنی پارلیمنٹ پر کہ وہ یہ دیکھے کہ وہ ایسے قوانین بنائے جس کے باعث مسلمان اپنی زندگیاں احکام قرآن وسنت کے موافق گزار سکیں)
    99Mirza Nasir Ahmad: That Ahmadis live their lives in accordance with their interpretation?
    (مرزاناصر احمد: احمدی لوگ اپنی زندگیاں اپنے مفہوم احکام کے مطابق گزار رہے ہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں!)
    Mirza Nasir Ahmad: And Wahabis live their lives in accordance with their interpretation?
    (مرزاناصر احمد: وہابی حضرات اپنی توضیح اور ترجمانی کے مطابق)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں!)
    Mirza Nasir Ahmad: And Barelvi, .... yes.
    (مرزاناصراحمد: اور بریلوی حضرات اپنی توضیح اور ترجمانی کے مطابق)
    Mr. Yahya Bakhtiar: I am only asking ....
    (جناب یحییٰ بختیار: میرا مدعا کہنے کا یہ ہے)
    مرزاناصراحمد: ہاں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... that the Legislature can do it?
    (جناب یحییٰ بختیار: کہ مقننہ ایسا کر سکتی ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: With that detail ....
    (مرزاناصراحمد: بشرط اس تفصیل کے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں!)
    Mirza Nasir Ahmad: .... I quite agree with it.
    (مرزاناصراحمد: جو میں نے بتائی ہے اس کے مطابق صحیح ہے۔ میں بالکل مانتا ہوں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Now, Sir, the next provision of Constitution to which I respectfully draw you attention is Article:2 of the Constitution.
    (جناب یحییٰ بختیار: تو جناب! دستور کی اگلی دفعہ یہ ہے کہ میں بصد احترام آپ کی توجہ منعطف کراتا ہوں۔ دستور کی دفعہ نمبر۲ یہ ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: Yes.
    (مرزاناصراحمد: جی ہاں!)
    Mr. Yahya Bakhtiar: It says: "Islam shall be the state religion of Pakistan."
    (جناب یحییٰ بختیار: اسلام پاکستان کا ریاستی مذہب ہوگا)
    Mirza Nasir Ahmad: This is Preamble.
    (مرزاناصر احمد: یہ تمہید ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, this is Article:2, this is not Preamble.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی نہیں۔ یہ دفعہ نمبر۲ ہے تمہید یہ نہیں ہے)
    100مرزاناصراحمد: (اپنے وفد کے رکن سے) دکھاؤ کانسٹی ٹیوشن ہے یہاں؟
    جناب یحییٰ بختیار: کانسٹی ٹیوشن دے دیجئے۔
    مرزاناصراحمد: (اپنے وفد کے ایک رکن سے) آرٹیکل نمبر:۲ نکالنا۔
    This is Introduction. Yes.
    Mr. Yahya Bakhtiar: This is Article:2.
    (جناب یحییٰ بختیار: یہ دفعہ نمبر:۲ ہے)
    مرزاناصراحمد: ہاں! In the Introduction. Very wise.
    Mr. Yahya Bakhtiar: And if you could kindly tell us what are the implications of this; what does it mean?
    (جناب یحییٰ بختیار: کیا آپ براہ کرم یہ بتاسکیں گے کہ اس کا کیا مطلب ہوا۔ اس سے کیا نتائج برآمد ہوتے ہیں؟)
    Mirza Nasir Ahmad: It is quite clear. Islam is the religion of the State.
    (مرزاناصر احمد: یہ ایک صاف بات ہے۔ حکومت کا مذہب اسلام ہوگا)
    Mr. Yahya Bakhtiar: It means that, in our Constitution, politics and religion are not kept separately. We are not a secular state and that....
    (جناب یحییٰ بختیار: مطلب یہ ہے کہ سیاست اور مذہب علیحدہ علیحدہ رکھے گئے ہیں۔ ہم غیرمذہبی حکومت نہیں ہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: I don't know. To my mind, it means that the politics takes on itself the responsibility to guard the interests of the religion.
    (مرزاناصر احمد: میں کہہ نہیں سکتا۔ میرے خیال میں تو اس کے معنی یہ ہیں کہ حکومت کی سیاست مذہب کے مفاد کی حفاظت کی ذمہ دار ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes, exactly, because of the difference.... (جناب یحییٰ بختیار: بالکل صحیح۔ قطعاً)
    Mirza Nasir Ahmad: Because something different. And it is not the mixture of the two.
    (مرزاناصر احمد: کیونکہ کچھ چیزیں مختلف ہیں اور یہ کہ ان دونوں کا یہ کوئی مرکب نہیں ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... that, under the American Constitution, it is provided that the State shall not establish any religion or another, it will not side with one sect or another; it will be absolutely neutral in religious matters. But ....
    (جناب یحییٰ بختیار: امریکہ کے دستور میں یہ ہے کہ حکومت مذہب کے اندر قائم نہیں ہوگی۔ یعنی کہ اس مذہب کی یا اس مذہب کی حوصلہ افزائی نہیں کرے گی۔ ایک فرقہ کی یا دوسرے فرقہ کی حمایت نہیں کرے گی اور مذہبی معاملات میں قطعاً غیرجانبدار رہے گی)
    101Mirza Nasir Ahmad: They also mean that State will not side with one religion or the other.
    (مرزاناصر احمد: جی ہاں۔ حکومت کسی ایک خاص مذہب کا ساتھ نہیں دے گی)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, but here ....
    Mirza Nasir Ahmad: It only says on the opposite side, you know, that the politics of this country takes upon itself the responsibility to safeguard the interests of Islam.
    (مرزاناصر احمد: لیکن ادھر یہ بات ہے کہ جیسے آپ جانتے ہیں کہ اس ملک کی حکومت نے اسلام کے مفاد کی حفاظت کے لئے ذمہ داری اٹھالی ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes, that is what I say.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں! یہی تو میں کہہ رہا ہوں)
    Mirza Nasir Ahmad: It does not say that we would not be partial to these who do not believe in Islam.
    (مرزاناصراحمد: لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ جو لوگ اسلام کے معتقد نہیں ہیں ان کے ساتھ ہم جانبدار رہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, no, I am not saying that. No that is their fundamental rights.... No, not in the least, not as far the non-Muslims are concerned....
    Mirza Nasir Ahmad: That clears the matter now.
    (مرزاناصر احمد: اس سے اب یہ بات صاف ہوگئی)
    Mr. Yahya Bakhtiar: As far as the Muslims are concerned, it will encourage them to see that they live their lives in accordance with the injunctions of Islam.
    (جناب یحییٰ بختیار: مسلمان اپنی زندگی احکام اسلام کے مطابق گذاریں گے)
    Mirza Nasir Ahmad: They say their prayers, they don't drink, they pay their Zakat, things like that.
    (مرزاناصر احمد: جی ہاں گزار رہے ہیں نمازیں پڑھتے ہیں۔ شراب نہیں پیتے۔ زکوٰۃ ادا کرتے ہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Then, Sir, there is further provision in the Constitution, Article:41 and Article:91....
    (جناب یحییٰ بختیار: تو جناب دستور میں ایک دفعہ نمبر۴۱ اور نمبر۹۱ بھی ہے…)
    Mirza Nasir Ahmad: That is ....
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... that requires that the President and the Prime Minister shall be Muslims.
    (جناب یحییٰ بختیار: کہ صدر اور وزیراعظم مسلمان ہوں گے)
    Mirza Nasir Ahmad: That is not the fundamental.... (مرزاناصر احمد: یہ بنیادی نہیں ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, no, this is part of the Constitution.
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں۔ یہ بات دستور کا حصہ ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: Under the heading?
    102Mr. Yahya Bakhtiar: This is not a directly part but obligatory part.
    (جناب یحییٰ بختیار: یہ ہدایت نہیں ہے بلکہ لازمی ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: Obligatory part?
    (مرزاناصراحمد: لازمی حصہ ہے؟)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Because Preamble is not enforceable. (جناب یحییٰ بختیار: کیونکہ تمہید نافذ العمل نہیںہوتی)
    مرزاناصراحمد: ہاں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: But this part ....
    Mirza Nasir Ahmad: This is enforceable?
    (مرزاناصراحمد: یہ بات نافذ العمل ہے؟)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Enforceable part.
    (جناب یحییٰ بختیار: نافذ العمل ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: This is after the Principles of Policy. Yes. (مرزاناصراحمد: یہ اصول پالیسی کے تحت ہے۔ جی ہاں!)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Now, Sir, I am going again to give that example. Supposing somebody, a very important man, a very popular man in our country, but not a Muslim, he files a declaration that "I am a Muslim and want to contest a election." Can anybody question that?
    (جناب یحییٰ بختیار: اب جناب! فرض کریں کوئی شخص کوئی اہم شخص کوئی ہمارے ملک کا بڑا ہر دلعزیز آدمی جو مسلمان نہیں ہے۔ یہ ڈکلیئریشن لگا دیتا ہے کہ میں مسلمان ہوں اور اس عہدے کے لئے لڑنا چاہتا ہوں کیا کوئی شخص اس پر اعتراض کر سکتا ہے؟)
    Mirza Nasir Ahmad: He could neither be pious nor great.
    (مرزاناصر احمد: ایسا آدمی نہ اہم ہوسکتا ہے نہ بڑا اور نہ خداترس پارسا)
    Mr. Yahya Bakhtiar: If he is not a Muslim?
    (جناب یحییٰ بختیار: اسی صورت میں کہ اگر وہ مسلمان نہیں ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: No, i f he files this declaration, how could you call him a pious man and a great man?
    (مرزاناصر احمد: نہیں اگر ایسا شخص ڈکلیئریشن لگاتا ہے تو آپ اس کو کیسے متقی اور بڑا کہہ سکتے ہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, but he makes a false declaration. People say: "Well somehow we made a mistake; we want to ...."
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں۔ لیکن وہ ایک جھوٹا اعلان کرتا ہے۔ لوگ کہتے ہیں کہ: ’’کسی نہ کسی طرح ہم نے ایک ایک غلطی کی ہے ہم چاہتے ہیں…‘‘
    Mirza Nasir Ahmad: No, no, if he files such on horrid declaration, then he is neither pious nor great.
    (مرزاناصر احمد: اگر وہ ایسا سخت قابل اعتراض ڈکلیئریشن لگاتا ہے تو وہ نہ پارسا ہے اور نہ بڑا آدمی)
    103Mr. Yahya Bakhtiar: No. I am just asking. Supposing a person....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں۔ میں یہ عرض کر رہا ہوں کہ فرض کریں ایک شخص …)
    Mirza Nasir Ahmad: It is not possible.
    (مرزاناصر احمد: یہ ممکن نہیں ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No ....
    (جناب یحییٰ بختیار: جی نہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: A pious man to file a false declaration?
    (مرزاناصراحمد: ایک پارسا آدمی کے لئے کہ وہ جھوٹا ڈکلیئریشن کرے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, let's take an example neither a Christian nor a Hindu. Supposing a person who does not believe in one, or two of the essentials of Islam....
    (جناب یحییٰ بختیار: جی نہیں! چلیں ایک مثال لیتے ہیں۔ نہ وہ کسی عیسائی کی ہے نہ کسی ایک ہندو کی۔ فرض کریں ایک ایسا شخص ہے جو اسلام کی لازمی ضروریات میں سے کسی ایک یا دو کا انکار کر دیتا ہے)
    مرزاناصراحمد: ہوں، ہوں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... like he denies Zakat, is Munkir of Zakat, and he files a declaration that 'I am a Muslim', and still he says he is a Muslim....
    (جناب یحییٰ بختیار: مثلاً زکوٰۃ ہے۔ وہ زکوٰۃ کو منع کرتا ہے۔ منکر زکوٰۃ ہے اور ساتھ ہی وہ ڈکلیئریشن لگاتا ہے کہ میں مسلمان ہوں اور بااصرار کہتا ہے میں مسلمان ہوں)
    Mirza Nasir Ahmad: And he ....
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... still says he is a Muslim.... (جناب یحییٰ بختیار: بااصرار کہتا ہے کہ وہ مسلمان ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: ہاں! Can he say? A pious Muslim files a declaration and ....
    (مرزاناصراحمد: ایک پارسا مسلمان جھوٹا ڈکلیئریشن دے۔ کیا وہ ایسا کہہ سکتا ہے…)
    Mr. Yahya Bakhtiar: I am not talking of a pious Muslim. (جناب یحییٰ بختیار: میں کسی پارسا مسلمان کی بات نہیں کر رہا)
    Mirza Nasir Ahmad: No, no, I am; I am talking about him. And the authority declares that he is not. Just the opposite of what you say; and opposite is also possible.
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, I am just asking whether somebody has a right to declare him one way or the other?
    (جناب یحییٰ بختیار: میں پوچھتا ہوں کہ کسی کو اختیار ہے نا۔ اعلان کرنے کا کہ متنازعہ شخص ادھر کا ہے یا ادھر کا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: Nobody has got the right to say that he is a Muslim when he feels, he thinks ....
    (مرزاناصر احمد: کسی کو حق نہیں پہنچتا کہنے کا کہ وہ مسلمان ہے۔ جب کہ وہ کہتا ہے اور اعتقاد رکھتا ہے کہ وہ نہیں ہے)
    104Mr. Yahya Bakhtiar: But supposing ....
    (جناب یحییٰ بختیار: لیکن فرض کریں)
    Mirza Nasir Ahmad: .... and believes that he is not .... (مرزاناصراحمد: اور اعتقاد رکھتا ہے کہ وہ مسلمان نہیں ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Supposing he has done it, has filed a form ....
    (جناب یحییٰ بختیار: فرض کریں اس نے ایسا نہیں کیا اور فارم داخل کرتا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: But he is a Muslim, but the authority concerned declares him as non-Muslim, then?
    (مرزاناصر احمد: لیکن وہ ایک مسلمان ہے۔ لیکن اتھارٹی کہتی ہے کہ وہ غیرمسلم ہے۔ تب؟)
    Mr. Yahya Bakhtiar: I will just give the opposite example, you know. I agree with you, that is possible. He will go to the court tell the court.....
    (جناب یحییٰ بختیار: آپ جانتے ہیں کہ میں نے صرف آپ کو مخالف مثال دی ہے۔ میں آپ کے ساتھ متفق ہوں۔ یہ ہوسکتا ہے وہ عدالت جائے گا اور عدالت میں کہے گا)
    مرزاناصراحمد: ہاں! So, there is one way open to him. (تو اس کے لئے ایک راستہ کھلا ہوا ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes, that is what I say. So, for a person who formally declares that he is a Muslim, when he denies one of the fundamentals of Islam or two fundamentals of Islam, openly denies, and still he says that he is a Muslim....
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں! یہی میں کہتا ہوں کہ ایک شخص جو باضابطہ طور پر مسلمان ہونے کا مدعی ہے۔ مگر ایک ضروری اسلام کی بنیادی شرط کو نہیں مانتا یا دو شرطوں کا کھلم کھلا انکاری ہے اور پھر بھی کہتا ہے میں مسلمان ہوں)
    Mirza Nasir Ahmad: Then the Government should go to the Court.
    (مرزاناصر احمد: تو اس صورت میں حکومت کو کورٹ میں جانا چاہئے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: The Government is interested that he should be elected, he is a popular, I say. Can anybody go to the Court and say "no"?
    (جناب یحییٰ بختیار: فرض کریں گورنمنٹ کو دلچسپی ہے اور چاہتی ہے کہ وہ الیکشن میں کامیاب ہو جائے۔ وہ ہردلعزیز ہے تو کیا کسی شخص کو حق پہنچتا ہے کہ وہ کورٹ کو رجوع کرے اور کہے۔ یہ غلط ہے۔ ایسا نہیں ہونا چاہئے)
    Mirza Nasir Ahmad: Well, I personally condemn that Government.
    (مرزاناصر احمد: میں ایسی حکومت کی ذاتی طور پر مذمت کرتا ہوں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Government I ....
    Mirza Nasir Ahmad: I don't know about the others. (مرزاناصراحمد: اوروں کے لئے تو نہیں کہہ سکتا)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Government is not the member of the Assembly we elect; Government is nobody in the Assembly. (جناب یحییٰ بختیار: اسمبلی میں حکومت کی کوئی شخصیت نہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: No?
    (مرزاناصراحمد: نہیں؟)
    105Mr. Yahya Bakhtiar: It is the members of the Assembly who elect; Government is nobody in the Assembly.
    Mirza Nasir Ahmad: No, you used the word "Government", that is why I repeated that.
    (مرزاناصر احمد: جی نہیں۔ حکومت کا لفظ آپ نے استعمال کیا)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, no, because ....
    Mirza Nasir Ahmad: You change the word and I will change that word.
    (مرزاناصراحمد: اگر آپ لفظ تبدیل کر دیں تو میں بھی تبدیل کر دوں گا)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Because you have been saying again and again, 'the Government'; I think you meant Legislature.
    (جناب یحییٰ بختیار: آپ باربار خود کہتے رہے ہیں کہ حکومت کو مقننہ سمجھا جائے)
    Mirza Nasir Ahmad: No, no, whoever is the authority concerned. (مرزاناصراحمد: نہیں! جو بھی متعلقہ اتھارٹی ہو)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں!)
    Mirza Nasir Ahmad: Whichever is the proper authority. (مرزاناصر احمد: جو بھی صحیح اتھارٹی ہو)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Supposing he thinks he is a popular man, he is a nice man, he is a man of character, his religious beliefs are somehow fair, but he does not believe in Zakat, Jehad or something, but we are not concerned. He says he is a Muslim, but he openly says "No, I don't accept Zakat as part of Islam and I don't think it is necessary"....
    (جناب یحییٰ بختیار: فرض کریں وہ سمجھتا ہے میں ہردلعزیز ہوں۔ اچھا آدمی ہوں۔ باکردار ہوں۔ مذہبی لیکن زکوٰۃ میں یا جہاد میں اعتقاد نہیں رکھتا۔ وہ صاف کہتا ہے۔ نہیں! میں زکوٰۃ کو اسلام کا حصہ نہیں سمجھتا اور اس کو ضروری خیال نہیں کرتا)
    Mirza Nasir Ahmad: They should not support him. (مرزاناصر احمد: ان کو اس کی تائید نہیں کرنی چاہئے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, but supposing they support him, can that be questioned ....
    (جناب یحییٰ بختیار: جی نہیں۔ لیکن فرض کریں وہ اس کی تائید کرتے ہیں تو کیا قانوناً اس پر سوال جواب ہوسکتا ہے)
    مرزاناصراحمد: ہاں… ہیں۔ (Pause)
    106Mr. Yahya Bakhtiar: .... or his declaration is enough under the law? I am speaking of law.
    (جناب یحییٰ بختیار: کیا اس کا ڈکلیئریشن قانون کے اعتبار سے کافی۔ میں قانون کی بات کر رہا ہوں)
    Mirza Nasir Ahmad: Is there a provision in this constitution that when such a thing is suspected, it should be settled by a court or, if it is not there, then who is going to decide? Suppose there is one member of this august House who says that the declaration is false,....
    (مرزاناصر احمد: کیا دستور میں یہ ہے کہ اگر اس طرح کی کوئی بات شبہ کی آجائے تو کورٹ اس کا فیصلہ کرے اور اگر کورٹ نہیں ہے تو کون فیصلہ کرے گا۔ فرض کریں ایک اسی جلیل القدر ہاؤس کے ممبر صاحب یہ کہتے ہیں کہ ڈکلیئریشن جھوٹا ہے…)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, ....
    Mirza Nasir Ahmad: .... a members from the Opposition, you know.
    (مرزاناصراحمد: حزب اختلاف کے کوئی ممبر صاحب۔ آپ جانتے ہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes, member of the Opposition can tell the Chief Election Commissioner when form is filled.
    (جناب یحییٰ بختیار: حزب اختلاف کے ممبر صاحب چیف الیکشن کمشنر صاحب کو کہہ سکتے ہیں جب فارم داخل کیا جارہا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: And his word is final.
    (مرزاناصر احمد: اور اس کا فیصلہ حتمی ہوگا)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, his word is final as far as they are concerned. But, If the objection is raised by one person that this man is not Muslim,....
    (جناب یحییٰ بختیار: اگر ایک شخص اعتراض اٹھاتا ہے کہ وہ مسلمان نہیں ہے)
    مرزاناصراحمد: ہوں، ہوں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... can, on the basis of your argument, the candidate say that it is none of your buiness?
    (جناب یحییٰ بختیار: تو کیا آپ کی بحث کی بنیاد پر امیدوار کہہ سکتا ہے۔ آپ کا اس سے کوئی سروکار نہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: What is the basis?
    (مرزاناصراحمد: بنیاد کیا ہے؟)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Why? Declaration is the final word.
    (جناب یحییٰ بختیار: کیوں! جو میں نے ڈکلیئریشن دیا ہے وہ قطعی ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: What is the basis of existing law? I must know that before I ....
    (مرزاناصر احمد: موجودہ قانون اس پر کیا کہتا ہے۔ مجھے بتایا جائے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Chief Election Commissioner can see. But the conduct ....
    (جناب یحییٰ بختیار: چیف الیکشن کمشنر کہہ سکتا ہے کہ…)
    Mirza Nasir Ahmad: Is it the Chief Election Commissioner? (مرزاناصر احمد: اس صورت میں الیکشن کمشنر ہے؟)
    107Mr. Yahya Bakhtiar: .... of the President cannot be questioned in the court of law.
    (جناب یحییٰ بختیار: کہ صدر کے طور طریق پر کورٹ میں فیصلہ نہیں اٹھایا جاسکتا)
    Mirza Nasir Ahmad: Is it the Election Commissioner who decides....
    (مرزاناصراحمد: تو ایسی صورتوں میں چیف الیکشن کمشنر ہے جو فیصلہ کرتا ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں!)
    Mirza Nasir Ahmad: .... in such cases ....
    (مرزاناصراحمد: ان معاملات میں…)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes. He scrutinizes the form; he has to see to it ....
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں! فارم کی وہی چھان بین کرتا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: .... that whether he is qualified for Presidentship ....
    (مرزاناصر احمد: کہ وہ صدارت کے لئے اہل ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes. And he is to take oath before him.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں! اور اس کو اس کے سامنے حلف لینا ہوگا)
    Mirza Nasir Ahmad: .... that he is qualified or not. (مرزاناصر احمد: …کہ وہ اہل ہے یا نہیں ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Oath is taken later, but he has to file the form before him that he is a Muslim, because....
    Mirza Nasir Ahmad: Has he got the right to question that oath?
    (مرزاناصراحمد: تو کیا وہ حلف پر شک کا اعتراض کرنے کا حق رکھتا ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: There scrutiny takes place.
    Mirza Nasir Ahmad: No, no; he takes; has he got the right?
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, but I am asking you. Supposing somebody ....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں بلکہ آپ بتائیں)
    Mirza Nasir Ahmad: No, no, I must know the law before I can....
    (مرزاناصراحمد: نہیں، نہیں۔ جواب دینے سے قبل مجھے قانون تو معلوم ہو)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Yes, yes.
    (جناب یحییٰ بختیار: ہاں، ہاں!)
    Mirza Nasir Ahmad: .... answer that question.
    108Mr. Yahya Bakhtiar: Supposing some Christian files a form ....
    (جناب یحییٰ بختیار: فرض کریں۔ چند عیسائی فارم پر کرتے ہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: And ....
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... The Chief Election Commissioner can throw it out and say, no, only Muslims can do it ....
    (جناب یحییٰ بختیار: چیف لیکشن کمشنر کہتا ہے نہیں۔ صرف مسلمان ڈکلیئر کر سکتے ہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: No .....
    (مرزاناصراحمد: جی نہیں!)
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... for the Presidentship or the Prime-Ministership.
    (جناب یحییٰ بختیار: صدارت کے عہدے کے لئے یا وزارت عظمیٰ کے لئے)
    Mirza Nasir Ahmad: Supposing a Christian is faithful to himself and does it ....?
    (مرزاناصر احمد: فرض کریں ایک عیسائی حلف اٹھاتا ہے اس کے لئے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, no, .....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: .... then he takes the oath before the Election Commissioner....
    (مرزاناصراحمد: اس نے الیکشن کمشنر کے سامنے حلف اٹھایا تب)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, no, ....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: .... the Election Commissioner has got the right to refuse to take his oath or not? (مرزاناصراحمد: الیکشن کمشنر کو حق نہیں پہنچتا کہ حلف کو نامنظور کر دے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, no, I am not talking of oath yet; that comes after the election. I am at the stage of filling nomination papers. When the nomination papers are filed, the Chief Election Commissioner will look at them. The first thing he is to see is that the papers carried a certificate that a person is 45 yesrs old. If the person is 30 years old, the Chief Election Commissioner say, "Well, I am sorry, you are not qualified."
    (جناب یحییٰ بختیار: جی نہیں۔ میں حلف کی بات نہیں کر رہا ہوں۔ وہ تو الیکشن کے بعد کی بات ہے۔ میں تو ابھی کاغذات نامزدگی داخل کرنے کے مقام پر ہوں۔ جب کاغذات نامزدگی داخل ہوں گے چیف الیکشن کمشنر ان پر نظر ڈالے گا۔ پہلی چیز وہ یہ دیکھے گا کہ کاغذات میں سرٹیفکیٹ ہے کہ وہ شخص ۴۵برس کی عمر کا ہے۔ اگر وہ تیس برس کا ہے تو چیف الیکشن کمشنر کہے گا جناب افسوس ہے آپ اہل نہیں ہیں)
    مرزاناصراحمد: ہاں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: Because the Contitution says ....
    109مرزاناصراحمد: ہاں! Under age
    Mr. Yahya Bakhtiar: So, I say, he is the authority on the spot to say that your papers are rejected.
    (جناب یحییٰ بختیار: تو میرا مطلب کہنے کا یہ ہے کہ اس موقعہ پر وہی اتھارٹی ہے جو مجاز ہے کہنے کا تمہارے کہنے کاغذات مسترد ہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: But can he reject? Can he reject his papers on the assumption that his declaration as a Muslim is incorrect?
    (مرزاناصر احمد: لیکن کیا وہ کاغذات کو مسترد کر سکتا ہے۔ اس مفروضہ کے تحت کہ اس کا اپنے آپ کو مسلمان کہنا غلط ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, I am saying on the assumption, he cannot do it; but supposing the objection is raised ....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں! اپنے مفروضہ پر وہ نہیں کہہ سکتا۔ مگر فرض کریں کہ اعتراض اٹھتا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: Who is going to decide?
    (مرزاناصر احمد: تو فیصلہ کون کرے گا؟)
    Mr. Yahya Bakhtiar: He.
    (جناب یحییٰ بختیار: وہی)
    Mirza Nasir Ahmad: That Election Commissioner.... whether he is a Muslim or not?
    (مرزاناصر احمد: چیف الیکشن کمشنر کہ وہ مسلمان ہے یا نہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, Sir, I am asking you if somebody objects that....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں جناب! میں آپ سے پوچھ رہا ہوں اگر کوئی اس پر اعتراض کرے)
    Mirza Nasir Ahmad: Well I am very sorry, I cannot.... I find myself just incapable of....
    (مرزاناصر احمد: مجھے معاف کیجئے۔ میں اپنے آپ کو ناقابل پاتا ہوں کہ…)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No, but if you kindly hear for a minute.
    Mirza Nasir Ahmad: .... making you understand what I want to know. My question is that I can form....
    (مرزاناصراحمد: میں آپ کو سمجھا سکوں کہ میں کیا معلوم کرنا چاہتا ہوں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: If you kindly listen to my question.
    Mirza Nasir Ahmad: .... I can form my opinion when I know the law.
    (مرزاناصراحمد: میر امفروضہ یہ ہے کہ میں اپنی رائے اسی وقت پیش کر سکتا ہوں جب مجھے معلوم ہو کہ قانون کیا ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No. I am not talking about the law. The law is ....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں میں قانون کی بات نہیں کر رہا ہوں)
    110Mirza Nasir Ahmad: My opinion would be formed on the knowledge of the law....
    (مرزاناصر احمد: میں تو اپنی رائے اسی وقت دے سکتا ہوں جب قانون کا مجھے علم ہو…)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Will you please....
    (جناب یحییٰ بختیار: کیا آپ مہربانی کریں گے؟)
    Mirza Nasir Ahmad: .... and not otherwise.
    (مرزاناصراحمد: ورنہ نہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... let me explain the case again? (جناب یحییٰ بختیار: میں دوبارہ کیس کو سمجھاتا ہوں)
    Mirza Nasir Ahmad: ہاں Yes, yes, جزاک اﷲ
    Mr. Yahya Bakhtiar: Now you have said that if a person announces, declares, proclaims, that he is a Muslim, nobody has any right to question his declaration.
    (جناب یحییٰ بختیار: آپ نے کہا ہے کہ اگر ایک شخص اعلان کرتا ہے۔ بیان دیتا ہے۔ باضابطہ کہتا ہے کہ میں مسلمان ہوں تو اس کے اعلان کرنے پر کسی کو اعتراض کرنے کا حق نہیں پہنچتا)
    Mirza Nasir Ahmad: Quite.
    (مرزاناصر احمد: بالکل!)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Now, if a person files a false form....
    (جناب یحییٰ بختیار: اب ایک شخص ہے جو جھوٹا فارم بھر دیتا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: If such a person ......
    (مرزاناصر احمد: اگر ایسا شخص …)
    Mr. Yahya Bakhtiar: No. No. Any person....
    (جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں۔ کوئی بھی شخص…)
    مرزاناصراحمد: ہاں، Any person.
    Mr. Yahya Bakhtiar: That is the principle.
    (جناب یحییٰ بختیار: یہ اصول ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: Yes, yes.
    (مرزاناصراحمد: جی ہاں، جی ہاں!)
    Mr. Yahya Bakhtiar: A person can be a Christian or anybody. That declaration cannot be questioned. Now supposing a man files his nomination paper for the office of the President of Pakistan and he says he is a Muslim, he writes there and declares that 'I am a Muslim', but some members or voters of Senate or National Assembly know that he denies certain fundamentals of Islam .....
    (جناب یحییٰ بختیار: وہ شخص عیسائی ہو یا کوئی بھی ہو۔ اس پر اعتراض نہیں کیاجاسکتا۔ اب فرض کریں کہ ایک شخص صدارت کے عہدے کے لئے کاغذات نامزدگی داخل کرتا ہے اور کہتا ہے کہ میں مسلمان ہوں، تحریر میں دیتا ہے۔ لیکن کچھ ممبران یا ووٹر قومی اسمبلی یا سینیٹ کے جانتے ہیں کہ یہ شخص اسلام کے کچھ بنیادی اصول سے انکار کرتا ہے…)
    111Mirza Nasir Ahmad: And the knowledge....
    (مرزاناصراحمد: اور ان کا یہ علم…)
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... and they raise ....
    Mirza Nasir Ahmad: .... is based on facts which they got to know two days ago? There might be a change within these two days.
    (مرزاناصر احمد: ان واقعات پر مبنی ہے جو انہیں دو دن پہلے معلوم ہوئے تو ممکن ہے کہ ان دو دن میں کچھ تبدیلی آگئی ہو)
    Mr. Yahya Bakhtiar: I am coming, I am coming to that. I have to explain the whole case.
    (جناب یحییٰ بختیار: میں اس بات پر آرہا ہوں۔ پوری صورتحال واضح کروں گا)
    مرزاناصراحمد: ہوں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: Now, after the nomination papers are filled, the date of scrutiny of papers is fixed.
    (جناب یحییٰ بختیار: کاغذات نامزدگی کے بعد جانچ پڑتال کی تاریخ مقرر ہوتی ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: They see he is 45 years old.
    (مرزاناصراحمد: دیکھا جاتا ہے کہ وہ ۴۵برس کا ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: They see he declares himself to by Muslim.
    (جناب یحییٰ بختیار: دیکھا جاتا ہے کہ وہ اپنے آپ کو مسلمان بھی کہتا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: He is otherwise qualified.
    (مرزاناصر احمد: مگر ویسے وہ اہل ہے)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Otherwise qualified on the face of it.
    (جناب یحییٰ بختیار: جی ہاں! ویسے وہ اہل ہے ظاہری طور پر)
    مرزاناصر احمد: ہاں، ناں۔ Yes.
    Mr. Yahya Bakhtiar: But objection is raised....
    (جناب یحییٰ بختیار: لیکن اعتراض اٹھتا ہے)
    مرزاناصراحمد: ہاں، ناں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... objection is raised that he says he is a Muslim, but in fact he is not, because he denies certain essentials of Islam.
    (جناب یحییٰ بختیار: اعتراض اٹھتا ہے اور وہ کہتا ہے میں مسلمان ہوں۔ جب کہ دراصل وہ مسلمان ہے نہیں۔ کیونکہ چند اسلام کی بنیادی باتوں سے انکار کرتا ہے)
    Mirza Nasir Ahmad: For instance?
    (مرزاناصراحمد: مثلاً بتائیں؟)
    112Mr. Yahya Bakhtiar: Zakat for instance
    (جناب یحییٰ بختیار: مثلاً زکوٰۃ)
    Mirza Nasir Ahmad: He says that?
    (مرزاناصراحمد: وہ کیا کہتا ہے؟)
    Mr. Yahya Bakhtiar: "It is not necessary; I don't believe in it."
    (جناب یحییٰ بختیار: یہ ضروری نہیں ہے۔ میں اس پر یقین نہیں رکھتا)
    Mirza Nasir Ahmad: This institution of Zakat should be abolished?
    (مرزاناصر احمد: وہ کہتا ہے کہ ادارۂ زکوٰۃ کو منسوخ کر دو)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Abolished or it never existed; "I do not believe in it."....
    (جناب یحییٰ بختیار: منسوخ کر دو یا اس کا کبھی وجود ہی نہ تھا میں اس میں اعتقاد نہیں رکھتا…)
    مرزاناصراحمد: ہوں، ہوں۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: .... that is his view. The Chief Election Commissioner asks, "Is it so?" he says, "Yes, Sir, but you are not concerned. You are concerned only with my declaration. I have written I am a Muslim. It is none of your business whether I believe in one tenant or not, or I believe in others or not." What will the Chief Election Commissioner do? Has he the right to interfere or not?
    (جناب یحییٰ بختیار: یہ اس کے تأثرات ہیں۔ چیف الیکشن کمشنر اس سے پوچھتا ہے کیا ایسا ہے وہ کہتا ہے ہاں۔ لیکن آپ کا اس سے مطلب نہیں۔ آپ کو تو صرف میرے ڈکلیئریشن سے مطلب ہے جس میں نے لکھ دیا ہے کہ میں مسلمان ہوں۔ آپ کہتے ہیں کہ آپ کو اس سے کیا مطلب۔ آپ کو اس سے کیا غرض کہ میں کسی عقیدہ پر اعتراض رکھتا ہوں یا نہیں اور چیف الیکشن کمشنر کا اس سے کیا تعلق کہ میں کیا عقیدہ رکھتا ہوں اس کو دخل اندازی کا کیا حق ہے۔
    Mirza Nasir Ahmad: What will the members of this House do?
    (مرزاناصر احمد: اس ہاؤس کے ممبران بتائیں کہ وہ اس بارے میں کیا کہتے ہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: Members of the House are not under oath to give evidence, Sir.
    (جناب یحییٰ بختیار: ممبران نے حلف نہیں اٹھایا ہے کہ وہ گواہ ہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: No, no.
    (مرزاناصراحمد: نہیں، نہیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: You are asking ....
    (جناب یحییٰ بختیار: آپ کہہ رہے ہیں)
    Mirza Nasir Ahmad: They are supposed to elect or reject.
    Mr. Yahya Bakhtiar: Mirza Sahib, you will guide them. In such circumstances, you will tell us that in the light of your interpretation of Article:20, the Chief Election Commissioner says, 'Yes, I will have to accept the declaration on the face of it?"
    (جناب یحییٰ بختیار: ان حالات میں دفعہ نمبر۲۰ کی اپنے مفہوم کے رو سے اگر چیف الیکشن کمشنر کہتا ہے کہ اس ڈکلیئریشن کو ظاہری حالت میں قبول کرنا پڑے گا تو پھر؟)
    113Mirza Nasir Ahmad: I have already humbly submitted so many times that these extreme examples, these imaginary examples, cannot solve the problem we are facing today. Let us face facts. You know .....
    (مرزاناصر احمد: میں نے کئی بار گذارش کی ہے کہ اس طرح کی انتہائی سخت مثالیں اس طرح کی خیالی مثالیں ان پرابلم کو حل نہیں کر سکتیں۔ جن کا ہم کو آج کل سامنا ہے۔ واقعاتی حالات کو سامنے رکھیں)
    Mr. Yahya Bakhtiar: I think we will continue after....
    (جناب یحییٰ بختیار: اب میرے خیال میں اس پر بعد میں بات ہونی چاہئے)
    Mr. Chairman: Yes, the Delegation is permittid to withdraw, to be in the House at 6: 00 pm.
    (جناب چیئرمین: درست ہے۔ وفد کو جانے کی اجازت ہے اور شام چھ بجے پھر آجائیں)
    (The Delegation left the Chamber)
    Mr. Chairman: The Special Committee is ....
    بات کرنی ہے جی؟
    Maulana Shah Ahmad Noorani: If you permit me.
    (مولانا شاہ احمد نورانی: آپ کی اجازت ہے)
    جناب چیئرمین: ہاں جی! مولانا شاہ احمد نورانی صدیقی۔

اس صفحے کی تشہیر