1. Photo of Milford Sound in New Zealand
  2. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  3. Photo of Milford Sound in New Zealand
  4. Photo of Milford Sound in New Zealand

مرزا غلام قادیانی کے تین سو تیرہ صحابہ کی لسٹ

مبشر شاہ نے 'روحانی خزائن جلد11' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ مارچ 31, 2020

  1. ‏ مارچ 31, 2020 #1
    مبشر شاہ

    مبشر شاہ رکن عملہ منتظم اعلی

    مرزا غلام قادیانی کے تین سو تیرہ صحابہ کی لسٹ (معاذ اللہ)

    مرزا غلام قادیانی نے دین اسلام کی ہر ہر چیز کی نکالی کی جیسے اپنے آپ کو اللہ کہہ دیا ، اپنے آپ کو محمد کہہ دیا ، قرآن کے بارے کہا کہ یہ میرے اوپر نازل ہوا ہے ، اپنی ازوج کو امہات المومنین کہا ، اسی طرح اپنے ہاتھ پر بیعت کرنے والوں کو صحابہ کا نام دیا ۔ تین سو تیرہ بدری صحابہ کی نسبت سےمرزا قادیانی نے بھی اپنے تین سو تیرہ نام نہاد صحابی بنائے تھی آئیے ان کی لسٹ ملاحظہ فرمائیں :

    325 ازقریہ کدعہ باشد۔ قال النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم یخرج المھدی من قریۃ یقال لھا کدعہ ویصدقہ اللّٰہ تعالٰی ویجمع اصحابہ من اقصَی البلاد علی عدّۃ اھل بدر بثلاث ماءۃ وثلا ثۃ عشر رجلا ومعہ صحیفۃ مختومۃ )ای مطبوعۃ( فیھا عدد اصحابہ باسماءھم وبلادھم وخلالھم یعنی مہدی اس گاؤں سے نکلے گا جس کا نام کدعہ ہے )یہ نام دراصل قادیان کے نام کو معرب کیا ہوا ہے( اور پھر فرمایا کہ خدا اس مہدی کی تصدیق کرے گا۔ اور دور دور سے اس کے دوست جمع کرے گا جن کا شمار اہل بدر کے شمار سے برابر ہوگا۔ یعنی تین سو ۳۱۳تیرہ ہوں گے۔ اور ان کے نام بقید مسکن وخصلت چھپی ہوئی کتاب میں درج ہوں گے۔ اب ظاہر ہے کہ کسی شخص کو پہلے اس سے یہ اتفاق نہیں ہوا کہ وہ مہدی موعود ہونے کا دعویٰ کرے اور اس کے پاس چھپی ہوئی کتاب ہو جس میں اس کے دوستوں کے نام ہوں۔ لیکن میں پہلے اس سے بھی آئینہ کمالات اسلام میں تین سو۳۱۳تیرہ نام درج کرچکا ہوں اور اب دو بارہ اتمام حجت کے لئے تین سو۳۱۳تیرہ نام ذیل میں درج کرتا ہوں تا ہریک منصف سمجھ لے کہ یہ پیشگوئی بھی میرے ہی حق میں پوری ہوئی۔ اور بموجب منشاء حدیث کے یہ بیان کر دینا پہلے سے ضروری ہے کہ یہ تمام اصحاب خصلت صدق و صفا رکھتے ہیں اور حسب مراتب جس کو اللہ تعالیٰ بہتر جانتا ہے بعض بعض سے محبت اور انقطاع الی اللہ اور سرگرمی دین میں سبقت لے گئے ہیں۔ اللہ تعالیٰ سب کو اپنی رضا کی راہوں میں ثابت قدم کرے۔ اور وہ یہ ہیں۔ منشی جلال الدین صاحب پنشنر سابق میر منشی رجمٹ نمبر ۱۲۔ موضع بلانی کھاریاں۔ ضلع گجرات ۲۔مولوی حافظ فضل دین صاحب ؍؍ ۳۔میاں محمد دین پٹواری بلانی ؍؍ ۴۔قاضی یوسف علی نعمانی معہ اہل بیت تشام حصار ۵۔میرزا امین بیگ صاحب معہ اہل بیت بہالوجی جیپور ۶۔مولوی قطب الدین صاحب۔بدوملی۔ سیالکوٹ ۷۔منشی روڑا صاحب۔ کپور تھلہ ۸۔میاں محمد خاں صاحب ؍؍ ۹۔منشی ظفر احمد صاحب ؍؍ ۱۰۔منشی عبد الرحمن صاحب ؍؍ ۱۱۔منشی فیاض علی صاحب ؍؍ ۱۲۔مولوی عبد الکریم صاحب سیالکوٹ ۱۳ ۔سید حامد شاہ صاحب ؍؍ ۱۴ ۔مولوی وزیر الدین صاحب کانگڑہ ۱۵۔منشی گوہر علی صاحب جالندھر ۱۶۔مولوی غلام علی صاحب ڈپٹی رہتاس۔ جہلم ۱۷۔میاں نبی بخش صاحب رفوگر۔ امرتسر ۱۸۔میاں قطب الدین خان صاحب مس گر ؍؍ ۱۹۔میاں عبد الخالق صاحب ؍؍ ۲۰۔مولوی ابو الحمید صاحب حیدرآباد دکن ۲۱۔مولوی حاجی حافظ حکیم نور دین صاحب معہ ہر دو زوجہ۔بھیرہ۔ ضلع شاہ پور ۲۲۔مولوی سید محمد احسن صاحب امروہہ ۔ ضلع مراد آباد ۲۳ ۔مولوی حاجی حافظ حکیم فضل دین صاحب معہ ہردوز زوجہ بھیرہ ۲۴ ۔صاحبزادہ محمد سراج الحق صاحب جمالی نعمانی قادیانی سابق سرساوی معہ اہلبیت ۲۵۔سید ناصر نواب صاحب دہلوی۔ حال قادیانی ۲۶۔صاحبزادہ افتخار احمد صاحب لدھیانوی بمعہ اہلبیت ؍؍ ۲۷ ۔صاحبزادہ منظور محمد صاحب معہ اہلبیت ؍؍ ۲۸ ۔حافظ حاجی مولوی احمد اللہ خان معہ اہلبیت ؍؍ ۲۹۔سیٹھ عبد الرحمن صاحب حاجی اللہ رکھا معہ اہلبیت مدراس ۳۰ ۔میاں جمال الدین سیکھواں گورداسپور معہ اہلبیت ۳۱ ۔میاں خیر الدین ؍؍ ؍؍ ؍؍ ۳۲۔ میاں امام الدین ؍؍ ؍؍ ؍؍ ۳۳۔ میاں عبد العزیز پٹواری ؍؍ ؍؍ ۳۴۔ منشی گلاب دین۔ رہتاس۔ جہلم ۳۵۔ قاضی ضیاء الدین صاحب۔ قاضی کوٹی ۳۶۔ میاں عبد اللہ صاحب پٹواری۔ سنوری ۳۷۔ شیخ عبدالرحیم صاحب نومسلم سابق لیس دفعدار رسالہ نمبر ۱۲ چھاؤنی سیالکوٹ ۳۸۔ مولوی مبارک علی صاحب امام ؍؍ ۳۹۔ میرزا نیاز بیگ صاحب کلا نوری ۴۰۔ میرزا یعقوب بیگ صاحب ۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۴۱۔ میرزا ایوب بیگ صاحب معہ اہلبیت۔۔؍؍ ۴۲۔ میرزا خدا بخش صاحب ۔ جھنگ ۴۳۔ سردار نواب محمد علیخاں صاحب رئیس مالیر کوٹلہ ۴۴۔سید محمد عسکری خان صاحب سابق اکٹرا اسسٹنٹ الہ آباد 325 ازقریہ کدعہ باشد۔ قال النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم یخرج المھدی من قریۃ یقال لھا کدعہ ویصدقہ اللّٰہ تعالٰی ویجمع اصحابہ من اقصَی البلاد علی عدّۃ اھل بدر بثلاث ماءۃ وثلا ثۃ عشر رجلا ومعہ صحیفۃ مختومۃ )ای مطبوعۃ( فیھا عدد اصحابہ باسماءھم وبلادھم وخلالھم یعنی مہدی اس گاؤں سے نکلے گا جس کا نام کدعہ ہے )یہ نام دراصل قادیان کے نام کو معرب کیا ہوا ہے( اور پھر فرمایا کہ خدا اس مہدی کی تصدیق کرے گا۔ اور دور دور سے اس کے دوست جمع کرے گا جن کا شمار اہل بدر کے شمار سے برابر ہوگا۔ یعنی تین سو ۳۱۳تیرہ ہوں گے۔ اور ان کے نام بقید مسکن وخصلت چھپی ہوئی کتاب میں درج ہوں گے۔ اب ظاہر ہے کہ کسی شخص کو پہلے اس سے یہ اتفاق نہیں ہوا کہ وہ مہدی موعود ہونے کا دعویٰ کرے اور اس کے پاس چھپی ہوئی کتاب ہو جس میں اس کے دوستوں کے نام ہوں۔ لیکن میں پہلے اس سے بھی آئینہ کمالات اسلام میں تین سو۳۱۳تیرہ نام درج کرچکا ہوں اور اب دو بارہ اتمام حجت کے لئے تین سو۳۱۳تیرہ نام ذیل میں درج کرتا ہوں تا ہریک منصف سمجھ لے کہ یہ پیشگوئی بھی میرے ہی حق میں پوری ہوئی۔ اور بموجب منشاء حدیث کے یہ بیان کر دینا پہلے سے ضروری ہے کہ یہ تمام اصحاب خصلت صدق و صفا رکھتے ہیں اور حسب مراتب جس کو اللہ تعالیٰ بہتر جانتا ہے بعض بعض سے محبت اور انقطاع الی اللہ اور سرگرمی دین میں سبقت لے گئے ہیں۔ اللہ تعالیٰ سب کو اپنی رضا کی راہوں میں ثابت قدم کرے۔ اور وہ یہ ہیں۔ منشی جلال الدین صاحب پنشنر سابق میر منشی رجمٹ نمبر ۱۲۔ موضع بلانی کھاریاں۔ ضلع گجرات ۲۔مولوی حافظ فضل دین صاحب ؍؍ ۳۔میاں محمد دین پٹواری بلانی ؍؍ ۴۔قاضی یوسف علی نعمانی معہ اہل بیت تشام حصار ۵۔میرزا امین بیگ صاحب معہ اہل بیت بہالوجی جیپور ۶۔مولوی قطب الدین صاحب۔بدوملی۔ سیالکوٹ ۷۔منشی روڑا صاحب۔ کپور تھلہ ۸۔میاں محمد خاں صاحب ؍؍ ۹۔منشی ظفر احمد صاحب ؍؍ ۱۰۔منشی عبد الرحمن صاحب ؍؍ ۱۱۔منشی فیاض علی صاحب ؍؍ ۱۲۔مولوی عبد الکریم صاحب سیالکوٹ ۱۳ ۔سید حامد شاہ صاحب ؍؍ ۱۴ ۔مولوی وزیر الدین صاحب کانگڑہ ۱۵۔منشی گوہر علی صاحب جالندھر ۱۶۔مولوی غلام علی صاحب ڈپٹی رہتاس۔ جہلم ۱۷۔میاں نبی بخش صاحب رفوگر۔ امرتسر ۱۸۔میاں قطب الدین خان صاحب مس گر ؍؍ ۱۹۔میاں عبد الخالق صاحب ؍؍ ۲۰۔مولوی ابو الحمید صاحب حیدرآباد دکن ۲۱۔مولوی حاجی حافظ حکیم نور دین صاحب معہ ہر دو زوجہ۔بھیرہ۔ ضلع شاہ پور ۲۲۔مولوی سید محمد احسن صاحب امروہہ ۔ ضلع مراد آباد ۲۳ ۔مولوی حاجی حافظ حکیم فضل دین صاحب معہ ہردوز زوجہ بھیرہ ۲۴ ۔صاحبزادہ محمد سراج الحق صاحب جمالی نعمانی قادیانی سابق سرساوی معہ اہلبیت ۲۵۔سید ناصر نواب صاحب دہلوی۔ حال قادیانی ۲۶۔صاحبزادہ افتخار احمد صاحب لدھیانوی بمعہ اہلبیت ؍؍ ۲۷ ۔صاحبزادہ منظور محمد صاحب معہ اہلبیت ؍؍ ۲۸ ۔حافظ حاجی مولوی احمد اللہ خان معہ اہلبیت ؍؍ ۲۹۔سیٹھ عبد الرحمن صاحب حاجی اللہ رکھا معہ اہلبیت مدراس ۳۰ ۔میاں جمال الدین سیکھواں گورداسپور معہ اہلبیت ۳۱ ۔میاں خیر الدین ؍؍ ؍؍ ؍؍ ۳۲۔ میاں امام الدین ؍؍ ؍؍ ؍؍ ۳۳۔ میاں عبد العزیز پٹواری ؍؍ ؍؍ ۳۴۔ منشی گلاب دین۔ رہتاس۔ جہلم ۳۵۔ قاضی ضیاء الدین صاحب۔ قاضی کوٹی ۳۶۔ میاں عبد اللہ صاحب پٹواری۔ سنوری ۳۷۔ شیخ عبدالرحیم صاحب نومسلم سابق لیس دفعدار رسالہ نمبر ۱۲ چھاؤنی سیالکوٹ ۳۸۔ مولوی مبارک علی صاحب امام ؍؍ ۳۹۔ میرزا نیاز بیگ صاحب کلا نوری ۴۰۔ میرزا یعقوب بیگ صاحب ۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۴۱۔ میرزا ایوب بیگ صاحب معہ اہلبیت۔۔؍؍ ۴۲۔ میرزا خدا بخش صاحب ۔ جھنگ ۴۳۔ سردار نواب محمد علیخاں صاحب رئیس مالیر کوٹلہ ۴۴۔سید محمد عسکری خان صاحب سابق اکٹرا اسسٹنٹ الہ آباد
    Ruhani-Khazain-Vol-11_Page_360.png
    Ruhani-Khazain-Vol-11_Page_361.png
    آخری تدوین : ‏ مارچ 31, 2020
  2. ‏ مارچ 31, 2020 #2
    مبشر شاہ

    مبشر شاہ رکن عملہ منتظم اعلی

    326 ۴۵۔میرزا محمد یوسف بیگ صاحب۔ سامانہ ریاست پٹیالہ ۴۶۔ شیخ شہاب الدین صاحب۔ لودیانہ ۴۷۔ شہزادہ عبد المجید صاحب۔ ؍؍ ۴۸۔ منشی حمید الدین صاحب۔ ؍؍ ۴۹۔ میاں کرم الٰہی صاحب ؍؍ ۵۰۔ قاضی زین العابدین صاحب خانپور۔ سرہند ۵۱ ۔ مولوی غلام حسن صاحب رجسٹرار۔۔۔ پشاور ۵۲ ۔محمد انوار حسین خان صاحب۔ شاہ آباد۔ ہردوئی ۵۳۔ شیخ فضل الٰہی صاحب۔ فیض اللہ چک ۵۴۔ میاں عبد العزیز صاحب۔ ۔۔۔ ۔۔۔ دہلی ۵۵۔ مولوی محمد سعید صاحب۔ شامی۔۔۔ طرابلسی ۵۶۔ مولوی حبیب شاہ صاحب۔ ۔۔۔ خوشاب ۵۷۔ حاجی احمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بخارا ۵۸۔ حافظ نور محمد صاحب۔ ۔۔۔ فیض اللہ چک ۵۹۔ شیخ نور احمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امرتسر ۶۰ ۔مولوی جمال الدین صاحب۔ ۔۔۔سید والہ ۶۱۔ میاں عبد اللہ صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ٹھٹھہ شیرکا ۶۲۔ میاں اسمعیل صاحب۔۔۔۔۔۔۔ سرساوہ ۶۳۔ میاں عبد العزیز صاحب نومسلم۔ قادیان ۶۴ ۔خواجہ کمال الدین صاحب بی اے معہ اہل بیت لاہور ۶۵۔ مفتی محمد صادق صاحب بھیرہ۔ ضلع شاہ پور ۶۶۔ شیر محمد خاں صاحب ۔۔۔ بکہر ؍؍ ۶۷۔ منشی محمد افضل صاحب لاہور حال۔۔۔ ممباسہ ۶۸۔ ڈاکٹر محمد اسمٰعیل خان صاحب گوڑیانی ملازم ؍؍ ۶۹۔میاں کریم الدین صاحب مدرس قلعہ سوبھا سنگھ ۷۰۔ سید محمد اسمٰعیل دہلوی طالب علم حال قادیان ۷۱۔ بابو تاج الدین صاحب اکونٹنٹ۔ لاہور ۷۲۔ شیخ رحمت اللہ صاحب تاجر۔ ۔۔۔۔۔۔؍؍ ۷۳۔ شیخ نبی بخش صاحب۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۷۴۔ منشی معراج الدین صاحب۔۔۔۔۔۔۔؍؍ ۷۵۔ شیخ مسیح اللہ صاحب ۔۔۔ شاہجہان پوری ۷۶۔منشی چوہدری نبی بخش صاحب معہ اہل بیت۔ بٹالہ ۷۷۔ میاں محمد اکبر صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بٹالہ ۷۸۔ شیخ مولا بخش صاحب۔ ۔۔۔ ڈنگہ گجرات ۷۹۔ سید امیر علی شاہ صاحب سارجنٹ سیالکوٹ ۸۰۔ میاں محمد جان صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔وزیر آباد ۸۱۔ میاں شادی خاں صاحب۔ ۔۔۔سیالکوٹ ۸۲۔ میاں محمد نواب خان صاحب تحصیلدار۔ جہلم ۸۳۔ میاں عبد اللہ خان صاحب برادر نواب خان صاحب؍؍ ۸۴۔ مولوی برہان الدین صاحب۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۸۵۔ شیخ غلام نبی صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔راولپنڈی ۸۶۔ بابو محمد بخش صاحب ہیڈ کلرک۔ چھاؤنی انبالہ ۸۷ ۔منشتی رحیم بخش صاحب میونسپل کمشنر۔ لدھیانہ ۸۸۔ منشی عبد الحق صاحب کرانچی والہ ۔۔۔ ؍؍ ۸۹۔ حافظ فضل احمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۹۰۔ قاضی امیر حسین صاحب۔۔۔۔۔۔۔ بھیرہ ۹۱۔ مولوی حسن علی صاحب مرحوم۔ ۔۔۔بھاگلپور ۹۲۔ مولوی فیض احمد صاحب لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ ۹۳۔ سید محمود شاہ صاحب مرحوم۔ ۔۔۔سیالکوٹ ۹۴ ۔مولوی غلام امام صاحب عزیز الواعظین منی پور آسام ۹۵۔ رحمن شاہ صاحب ناگپور ضلع چاندہ۔وڑوڑہ ۹۶ ۔میاں جان محمد صاحب مرحوم۔ ۔۔۔قادیان ۹۷۔ منشی فتح محمد معہ اہلبیت بز دارلیہ ڈیرہ اسمٰعیل خاں ۹۸۔ شیخ محمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مکی ۹۹ ۔حاجی منشی احمد جان صاحب مرحوم۔ لودیانہ ۱۰۰۔ منشی پیر بخش صاحب مرحوم ۔۔۔ جالندھر ۱۰۱ ۔شیخ عبد الرحمن صاحب نومسلم ۔۔۔ قادیان ۱۰۲۔ حاجی عصمت اللہ صاحب۔ ۔۔۔ لودیانہ ۱۰۳۔ میاں پیر بخش صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۰۴۔ منشی ابراہیم صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۰۵۔ منشی قمر الدین صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۰۶۔ حاجی محمد امیر خاں صاحب۔ ۔۔۔سہارنپور ۱۰۷۔ حاجی عبد الرحمن صاحب مرحوم۔ ۔۔۔لودیانہ ۱۰۸۔ قاضی خواجہ علی صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۰۹۔ منشی تاج محمد خاں صاحب۔ ۔۔۔ لودیانہ ۱۱۰۔ سید محمد ضیاء الحق صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔روپڑ ۱۱۱۔شیخ محمد عبد الرحمن صاحب عرف شعبان۔ کابلی ۱۱۲۔ خلیفہ رجب دین صاحب تاجر۔ ۔۔۔لاہور ۱۱۳۔ پیر جی خدا بخش صاحب مرحوم۔ ڈیرہ دون ۱۱۴۔ حافظ مولوی محمد یعقوب خان صاحب ؍؍ ۱۱۵۔ شیخ چرا غ علی نمبردار۔ ۔۔۔۔۔۔تھہ غلام نبی ۱۱۶ ۔محمد اسمٰعیل غلام کبریا صاحب فرزند رشید مولوی محمد احسن صاحب امروہی۔ ۱۱۷۔ احمد حسن صاحب فرزند رشید مولوی محمد احسن صاحب امروہی۔ ۱۱۸۔ سیٹھ احمد صاحب عبد الرحمن حاجی اللہ رکھا تاجرمدراس۔ ۱۱۹ ۔ سیٹھ صالح محمد حاجی اللہ رکھا تاجر مدراس ۱۲۰۔ سیٹھ ابراہیم صاحب صالح محمد حاجی اللہ رکھا؍؍ ۱۲۱ ۔سیٹھ عبد الحمید صاحب حاجی ایوب حاجی اللہ رکھا؍؍ ۱۲۲۔ حاجی مہدی صاحب عربی بغدادی نزیل ؍؍ ۱۲۳۔سیٹھ محمد یوسف صاحب حاجی اللہ رکھا ؍؍ ۱۲۴۔ مولوی سلطان محمود صاحب میلا پور ؍؍ ۱۲۵۔ حکیم محمد سعید صاحب ؍؍ ۱۲۶۔ منشی قادر علی صاحب ؍؍ ۱۲۷۔ منشی غلام دستگیر صاحب ؍؍ ۱۲۸۔ منشی سراج الدین صاحب ترمل کہیڑی ؍؍ ۱۲۹۔ قاضی غلام مرتضیٰ صاحب اکسٹرا اسسٹنٹ کمشنر مظفر گڑھ حال پنشنر ۱۳۰۔ مولوی عبد القادر خان صاحب جمالپور۔ لودیانہ ۱۳۱۔ مولوی عبد القادر صاحب۔ خاص لودیانہ ۱۳۲۔ مولوی رحیم اللہ صاحب مرحوم ۔۔۔ لاہور ۱۳۳۔ مولوی غلام حسین صاحب ۔۔۔ ؍؍ ۱۳۴۔مولوی غلام نبی صاحب مرحوم خوشاب شاہ پور ۱۳۵۔ مولوی محمد حسین صاحب علاقہ ریاست کپور تھلہ ۱۳۶۔مولوی شہاب الدین صاحب غزنوی۔ کابلی 326 ۴۵۔میرزا محمد یوسف بیگ صاحب۔ سامانہ ریاست پٹیالہ ۴۶۔ شیخ شہاب الدین صاحب۔ لودیانہ ۴۷۔ شہزادہ عبد المجید صاحب۔ ؍؍ ۴۸۔ منشی حمید الدین صاحب۔ ؍؍ ۴۹۔ میاں کرم الٰہی صاحب ؍؍ ۵۰۔ قاضی زین العابدین صاحب خانپور۔ سرہند ۵۱ ۔ مولوی غلام حسن صاحب رجسٹرار۔۔۔ پشاور ۵۲ ۔محمد انوار حسین خان صاحب۔ شاہ آباد۔ ہردوئی ۵۳۔ شیخ فضل الٰہی صاحب۔ فیض اللہ چک ۵۴۔ میاں عبد العزیز صاحب۔ ۔۔۔ ۔۔۔ دہلی ۵۵۔ مولوی محمد سعید صاحب۔ شامی۔۔۔ طرابلسی ۵۶۔ مولوی حبیب شاہ صاحب۔ ۔۔۔ خوشاب ۵۷۔ حاجی احمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بخارا ۵۸۔ حافظ نور محمد صاحب۔ ۔۔۔ فیض اللہ چک ۵۹۔ شیخ نور احمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امرتسر ۶۰ ۔مولوی جمال الدین صاحب۔ ۔۔۔سید والہ ۶۱۔ میاں عبد اللہ صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ٹھٹھہ شیرکا ۶۲۔ میاں اسمعیل صاحب۔۔۔۔۔۔۔ سرساوہ ۶۳۔ میاں عبد العزیز صاحب نومسلم۔ قادیان ۶۴ ۔خواجہ کمال الدین صاحب بی اے معہ اہل بیت لاہور ۶۵۔ مفتی محمد صادق صاحب بھیرہ۔ ضلع شاہ پور ۶۶۔ شیر محمد خاں صاحب ۔۔۔ بکہر ؍؍ ۶۷۔ منشی محمد افضل صاحب لاہور حال۔۔۔ ممباسہ ۶۸۔ ڈاکٹر محمد اسمٰعیل خان صاحب گوڑیانی ملازم ؍؍ ۶۹۔میاں کریم الدین صاحب مدرس قلعہ سوبھا سنگھ ۷۰۔ سید محمد اسمٰعیل دہلوی طالب علم حال قادیان ۷۱۔ بابو تاج الدین صاحب اکونٹنٹ۔ لاہور ۷۲۔ شیخ رحمت اللہ صاحب تاجر۔ ۔۔۔۔۔۔؍؍ ۷۳۔ شیخ نبی بخش صاحب۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۷۴۔ منشی معراج الدین صاحب۔۔۔۔۔۔۔؍؍ ۷۵۔ شیخ مسیح اللہ صاحب ۔۔۔ شاہجہان پوری ۷۶۔منشی چوہدری نبی بخش صاحب معہ اہل بیت۔ بٹالہ ۷۷۔ میاں محمد اکبر صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بٹالہ ۷۸۔ شیخ مولا بخش صاحب۔ ۔۔۔ ڈنگہ گجرات ۷۹۔ سید امیر علی شاہ صاحب سارجنٹ سیالکوٹ ۸۰۔ میاں محمد جان صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔وزیر آباد ۸۱۔ میاں شادی خاں صاحب۔ ۔۔۔سیالکوٹ ۸۲۔ میاں محمد نواب خان صاحب تحصیلدار۔ جہلم ۸۳۔ میاں عبد اللہ خان صاحب برادر نواب خان صاحب؍؍ ۸۴۔ مولوی برہان الدین صاحب۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۸۵۔ شیخ غلام نبی صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔راولپنڈی ۸۶۔ بابو محمد بخش صاحب ہیڈ کلرک۔ چھاؤنی انبالہ ۸۷ ۔منشتی رحیم بخش صاحب میونسپل کمشنر۔ لدھیانہ ۸۸۔ منشی عبد الحق صاحب کرانچی والہ ۔۔۔ ؍؍ ۸۹۔ حافظ فضل احمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۹۰۔ قاضی امیر حسین صاحب۔۔۔۔۔۔۔ بھیرہ ۹۱۔ مولوی حسن علی صاحب مرحوم۔ ۔۔۔بھاگلپور ۹۲۔ مولوی فیض احمد صاحب لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ ۹۳۔ سید محمود شاہ صاحب مرحوم۔ ۔۔۔سیالکوٹ ۹۴ ۔مولوی غلام امام صاحب عزیز الواعظین منی پور آسام ۹۵۔ رحمن شاہ صاحب ناگپور ضلع چاندہ۔وڑوڑہ ۹۶ ۔میاں جان محمد صاحب مرحوم۔ ۔۔۔قادیان ۹۷۔ منشی فتح محمد معہ اہلبیت بز دارلیہ ڈیرہ اسمٰعیل خاں ۹۸۔ شیخ محمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مکی ۹۹ ۔حاجی منشی احمد جان صاحب مرحوم۔ لودیانہ ۱۰۰۔ منشی پیر بخش صاحب مرحوم ۔۔۔ جالندھر ۱۰۱ ۔شیخ عبد الرحمن صاحب نومسلم ۔۔۔ قادیان ۱۰۲۔ حاجی عصمت اللہ صاحب۔ ۔۔۔ لودیانہ ۱۰۳۔ میاں پیر بخش صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۰۴۔ منشی ابراہیم صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۰۵۔ منشی قمر الدین صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۰۶۔ حاجی محمد امیر خاں صاحب۔ ۔۔۔سہارنپور ۱۰۷۔ حاجی عبد الرحمن صاحب مرحوم۔ ۔۔۔لودیانہ ۱۰۸۔ قاضی خواجہ علی صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۰۹۔ منشی تاج محمد خاں صاحب۔ ۔۔۔ لودیانہ ۱۱۰۔ سید محمد ضیاء الحق صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔روپڑ ۱۱۱۔شیخ محمد عبد الرحمن صاحب عرف شعبان۔ کابلی ۱۱۲۔ خلیفہ رجب دین صاحب تاجر۔ ۔۔۔لاہور ۱۱۳۔ پیر جی خدا بخش صاحب مرحوم۔ ڈیرہ دون ۱۱۴۔ حافظ مولوی محمد یعقوب خان صاحب ؍؍ ۱۱۵۔ شیخ چرا غ علی نمبردار۔ ۔۔۔۔۔۔تھہ غلام نبی ۱۱۶ ۔محمد اسمٰعیل غلام کبریا صاحب فرزند رشید مولوی محمد احسن صاحب امروہی۔ ۱۱۷۔ احمد حسن صاحب فرزند رشید مولوی محمد احسن صاحب امروہی۔ ۱۱۸۔ سیٹھ احمد صاحب عبد الرحمن حاجی اللہ رکھا تاجرمدراس۔ ۱۱۹ ۔ سیٹھ صالح محمد حاجی اللہ رکھا تاجر مدراس ۱۲۰۔ سیٹھ ابراہیم صاحب صالح محمد حاجی اللہ رکھا؍؍ ۱۲۱ ۔سیٹھ عبد الحمید صاحب حاجی ایوب حاجی اللہ رکھا؍؍ ۱۲۲۔ حاجی مہدی صاحب عربی بغدادی نزیل ؍؍ ۱۲۳۔سیٹھ محمد یوسف صاحب حاجی اللہ رکھا ؍؍ ۱۲۴۔ مولوی سلطان محمود صاحب میلا پور ؍؍ ۱۲۵۔ حکیم محمد سعید صاحب ؍؍ ۱۲۶۔ منشی قادر علی صاحب ؍؍ ۱۲۷۔ منشی غلام دستگیر صاحب ؍؍ ۱۲۸۔ منشی سراج الدین صاحب ترمل کہیڑی ؍؍ ۱۲۹۔ قاضی غلام مرتضیٰ صاحب اکسٹرا اسسٹنٹ کمشنر مظفر گڑھ حال پنشنر ۱۳۰۔ مولوی عبد القادر خان صاحب جمالپور۔ لودیانہ ۱۳۱۔ مولوی عبد القادر صاحب۔ خاص لودیانہ ۱۳۲۔ مولوی رحیم اللہ صاحب مرحوم ۔۔۔ لاہور ۱۳۳۔ مولوی غلام حسین صاحب ۔۔۔ ؍؍ ۱۳۴۔مولوی غلام نبی صاحب مرحوم خوشاب شاہ پور ۱۳۵۔ مولوی محمد حسین صاحب علاقہ ریاست کپور تھلہ ۱۳۶۔مولوی شہاب الدین صاحب غزنوی۔ کابلی

    Ruhani-Khazain-Vol-11_Page_362.png
  3. ‏ مارچ 31, 2020 #3
    مبشر شاہ

    مبشر شاہ رکن عملہ منتظم اعلی

    327 ۱۳۷۔ مولوی سید محمد تفضل حسین صاحب اکسٹرا اسٹنٹ۔ علی گڑھ ضلع فرخ آباد ۱۳۸۔ منشی صادق حسین صاحب مختار۔۔۔۔ اٹاوہ ۱۳۹۔ شیخ مولوی فضل حسین صاحب احمد آبادی۔ جہلم ۱۴۰۔ میاں عبد العلی موضع عبد الرحمن ضلع شاہ پور ۱۴۱۔ منشی نصیر الدین صاحب لونی۔ حال حیدر آباد ۱۴۲۔ قاضی محمد یوسف صاحب قاضی کوٹ۔ گوجرانوالہ ۱۴۳۔ قاضی فضل الدین صاحب ؍؍ ؍؍ ۱۴۴۔ قاضی سراج الدین صاحب ؍؍ ؍؍ ۱۴۵۔ قاضی عبد الرحیم صاحب فرزند رشید قاضی ضیاء الدین صاحب کوٹ قاضی۔ گوجرانوالہ ۱۴۶۔ شیخ کرم الٰہی صاحب کلرک ریلوے۔ پٹیالہ ۱۴۷۔ میرزا عظیم بیگ صاحب مرحوم۔ سامانہ۔ پٹیالہ ۱۴۸۔ میرزا ابراہیم بیگ صاحب مرحوم ؍؍ ؍؍ ۱۴۹۔ میاں غلام محمد طالب علم مچہرالہ۔ ۔۔۔لاہور ۱۵۰۔ مولوی محمد فضل صاحب چنگا۔ ۔۔۔گوجر خاں ۱۵۱۔ ماسٹر قادر بخش صاحب لدھیانہ ۱۵۲۔ منشی الہ بخش صاحب۔ ؍؍ ؍؍ ۱۵۳۔ حاجی ملا نظام الدین صاحب ؍؍ ۱۵۴۔ عطاء الٰہی غوث گڈہ۔۔۔۔۔۔۔ پٹیالہ ۱۵۵۔ مولوی نور محمد صاحب مانگٹ ؍؍ ۱۵۶۔ مولوی کریم اللہ صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔امرتسر ۱۵۷۔ سید عبد الہادی صاحب سولن۔۔۔۔ شملہ ۱۵۸۔ مولوی محمد عبد اللہ خان صاحب۔ پٹیالہ ۱۵۹۔ ڈاکٹر عبد الحکیم خاں صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۶۰۔ ڈاکٹر بوڑے خان صاحب۔ قصور۔ ضلع لاہور ۱۶۱۔ڈاکٹر خلیفہ رشید الدین صاحب لاہور۔ حال چکراتہ ۱۶۲ ۔غلام محی الدین خان صاحب فرزند ڈاکٹر بوڑے خان صاحب ۱۶۳۔مولوی صفدر حسین صاحب۔ حیدر آباد دکن ۱۶۴۔ خلیفہ نور دین صاحب۔۔۔۔ جموں ۱۶۵۔ میاں اللہ دتا صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۶۶۔ منشی عزیز الدین۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کانگڑہ ۱۶۷۔ سید مہدی حسین صاحب علاقہ پٹیالہ ۱۶۸۔ مولوی حکیم نور محمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔موکل ۱۶۹۔ حافظ محمد بخش مرحوم۔ ۔۔۔۔۔۔ کوٹ قاضی ۱۷۰۔ چوہدری شرف الدین صاحب۔ کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۱۷۱۔ میاں رحیم بخش صاحب۔۔۔۔۔۔۔ امرتسر ۱۷۲۔ مولوی محمد افضل صاحب کملہ۔ گجرات ۱۷۳۔ میاں اسمٰعیل صاحب۔۔۔۔ امرتسری ۱۷۴۔ مولوی غلام جیلانی صاحب گھڑونواں۔ جالندھر ۱۷۵۔منشی امانت خان صاحب۔ نادون۔ کانگڑہ ۱۷۶۔ قاری محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جہلم ۱۷۷۔ میاں کرم داد معہ اہل بیت۔ قادیان ۱۷۸۔ حافظ نور احمد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لودیانہ ۱۷۹۔ میاں کرم الٰہی صاحب۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۱۸۰۔ میاں عبد الصمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ نارووال ۱۸۱۔ میاں غلام حسین معہ اہلیہ۔۔۔۔۔۔۔ رہتاس ۱۸۲۔ میاں نظام الدین صاحب۔۔۔۔۔۔ جہلم ۱۸۳۔ میاں محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جہلم ۱۸۴۔ میاں علی محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۸۵۔ میاں عباس خاں۔ کہوہار۔ ۔۔۔گجرات ۱۸۶۔ میاں قطب الدین صاحب۔ کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۱۸۷۔میاں اللہ دتا خان صاحب اڑیالہ۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۸۸۔ محمد حیات صاحب۔ چک جانی ۔۔۔ ؍؍ ۱۸۹۔ مخدوم مولوی محمد صدیق صاحب۔ بھیرہ ۱۹۰۔ عبد المغنی صاحب فرزند رشید مولوی برہان الدین صاحب جہلمی ۱۹۱ ۔ قاضی چراغ الدین۔ کوٹ قاضی۔ گوجرانوالہ ۱۹۲۔ میاں فضل الدین صاحب قاضی کوٹ ۱۹۳۔ میاں علم الدین صاحب کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۱۹۴۔ قاضی میر محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ کوٹ کھلیان ۱۹۵۔ میاں اللہ دتا صاحب۔۔۔ نت۔ گوجرانوالہ ۱۹۶۔ میاں سلطان محمد صاحب۔۔۔ ؍؍ ۱۹۷۔ مولوی خان ملک صاحب کھیوال ۱۹۸۔ میاں الہ بخش صاحب علاقہ بند۔ امرتسر ۱۹۹۔ مولوی عنایت اللہ مدرس ۔۔۔ مانانوالہ ۲۰۰۔ منشی میرا بخش صاحب ۔۔۔ گوجرانوالہ ۲۰۱۔ مولوی احمد جان صاحب مدرس ؍؍ ۲۰۲۔ مولوی حافظ احمد دین چک سکندر گجرات ۲۰۳۔ مولوی عبد الرحمن صاحب کہیوال۔ جہلم ۲۰۴۔ میاں مہر دین صاحب۔۔۔۔ لالہ موسیٰ ۲۰۵۔ میاں ابراہیم صاحب پنڈوری۔ جہلم ۲۰۶۔ سید محمود شاہ صاحب فتح پور۔ گجرات ۲۰۷۔ محمد جو صاحب۔۔۔۔ امرتسر ۲۰۸۔ منشی شاہ دین صاحب۔ دینا۔ جہلم ۲۰۹۔ منشی روشن دین صاحب۔ ڈنڈوت۔ ؍؍ ۲۱۰۔ حکیم فضل الٰہی صاحب۔۔۔۔ لاہور ۲۱۱ ۔شیخ عبد اللہ دیوانچند صاحب کمپونڈر ؍؍ ۲۱۲۔ منشی محمد علی صاحب ؍؍ ۲۱۳۔ منشی امام الدین صاحب کلرک ؍؍ ۲۱۴۔ منشی عبد الرحمن صاحب ؍؍ ۔۔۔ ؍؍ ۲۱۵۔خواجہ جمال الدین صاحب بی اے لاہور حال جموں ۲۱۶۔ منشی مولا بخش صاحب کلرک۔۔۔ لاہور ۲۱۷۔ شیخ محمد حسین صاحب مراد آبادی۔۔۔ پٹیالہ ۲۱۸۔ عالم شاہ صاحب کھاریاں۔۔۔۔۔۔ گجرات ۲۱۹۔ مولوی شیر محمد صاحب ہوہن۔۔۔ شاہپور ۲۲۰ ۔ میاں محمد اسحٰق صاحب اوورسیر بھیرہ۔ حال ممباسہ ۲۲۱۔ میرزا اکبر بیگ صاحب۔۔۔۔ کلانور ۲۲۲۔ مولوی محمد یوسف صاحب۔۔۔۔ سنور ۲۲۳۔ میاں عبد الصمد صاحب۔۔۔۔ ؍؍ ۲۲۴۔ منشی عطا محمد صاحب۔۔۔۔۔۔ سیالکوٹ ۲۲۵۔ شیخ مولا بخش صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۲۲۶۔سید خصیلت علی شاہ صاحب ڈپٹی انسپکٹر ڈنگہ ۲۲۷۔منشی رستم علی صاحب کورٹ انسپکٹر گورداسپورہ ۲۲۸۔ سید احمد علی شاہ صاحب۔۔۔۔۔۔ سیالکوٹ 327 ۱۳۷۔ مولوی سید محمد تفضل حسین صاحب اکسٹرا اسٹنٹ۔ علی گڑھ ضلع فرخ آباد ۱۳۸۔ منشی صادق حسین صاحب مختار۔۔۔۔ اٹاوہ ۱۳۹۔ شیخ مولوی فضل حسین صاحب احمد آبادی۔ جہلم ۱۴۰۔ میاں عبد العلی موضع عبد الرحمن ضلع شاہ پور ۱۴۱۔ منشی نصیر الدین صاحب لونی۔ حال حیدر آباد ۱۴۲۔ قاضی محمد یوسف صاحب قاضی کوٹ۔ گوجرانوالہ ۱۴۳۔ قاضی فضل الدین صاحب ؍؍ ؍؍ ۱۴۴۔ قاضی سراج الدین صاحب ؍؍ ؍؍ ۱۴۵۔ قاضی عبد الرحیم صاحب فرزند رشید قاضی ضیاء الدین صاحب کوٹ قاضی۔ گوجرانوالہ ۱۴۶۔ شیخ کرم الٰہی صاحب کلرک ریلوے۔ پٹیالہ ۱۴۷۔ میرزا عظیم بیگ صاحب مرحوم۔ سامانہ۔ پٹیالہ ۱۴۸۔ میرزا ابراہیم بیگ صاحب مرحوم ؍؍ ؍؍ ۱۴۹۔ میاں غلام محمد طالب علم مچہرالہ۔ ۔۔۔لاہور ۱۵۰۔ مولوی محمد فضل صاحب چنگا۔ ۔۔۔گوجر خاں ۱۵۱۔ ماسٹر قادر بخش صاحب لدھیانہ ۱۵۲۔ منشی الہ بخش صاحب۔ ؍؍ ؍؍ ۱۵۳۔ حاجی ملا نظام الدین صاحب ؍؍ ۱۵۴۔ عطاء الٰہی غوث گڈہ۔۔۔۔۔۔۔ پٹیالہ ۱۵۵۔ مولوی نور محمد صاحب مانگٹ ؍؍ ۱۵۶۔ مولوی کریم اللہ صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔امرتسر ۱۵۷۔ سید عبد الہادی صاحب سولن۔۔۔۔ شملہ ۱۵۸۔ مولوی محمد عبد اللہ خان صاحب۔ پٹیالہ ۱۵۹۔ ڈاکٹر عبد الحکیم خاں صاحب۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۶۰۔ ڈاکٹر بوڑے خان صاحب۔ قصور۔ ضلع لاہور ۱۶۱۔ڈاکٹر خلیفہ رشید الدین صاحب لاہور۔ حال چکراتہ ۱۶۲ ۔غلام محی الدین خان صاحب فرزند ڈاکٹر بوڑے خان صاحب ۱۶۳۔مولوی صفدر حسین صاحب۔ حیدر آباد دکن ۱۶۴۔ خلیفہ نور دین صاحب۔۔۔۔ جموں ۱۶۵۔ میاں اللہ دتا صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۶۶۔ منشی عزیز الدین۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کانگڑہ ۱۶۷۔ سید مہدی حسین صاحب علاقہ پٹیالہ ۱۶۸۔ مولوی حکیم نور محمد صاحب۔ ۔۔۔۔۔۔موکل ۱۶۹۔ حافظ محمد بخش مرحوم۔ ۔۔۔۔۔۔ کوٹ قاضی ۱۷۰۔ چوہدری شرف الدین صاحب۔ کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۱۷۱۔ میاں رحیم بخش صاحب۔۔۔۔۔۔۔ امرتسر ۱۷۲۔ مولوی محمد افضل صاحب کملہ۔ گجرات ۱۷۳۔ میاں اسمٰعیل صاحب۔۔۔۔ امرتسری ۱۷۴۔ مولوی غلام جیلانی صاحب گھڑونواں۔ جالندھر ۱۷۵۔منشی امانت خان صاحب۔ نادون۔ کانگڑہ ۱۷۶۔ قاری محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جہلم ۱۷۷۔ میاں کرم داد معہ اہل بیت۔ قادیان ۱۷۸۔ حافظ نور احمد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لودیانہ ۱۷۹۔ میاں کرم الٰہی صاحب۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۱۸۰۔ میاں عبد الصمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ نارووال ۱۸۱۔ میاں غلام حسین معہ اہلیہ۔۔۔۔۔۔۔ رہتاس ۱۸۲۔ میاں نظام الدین صاحب۔۔۔۔۔۔ جہلم ۱۸۳۔ میاں محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جہلم ۱۸۴۔ میاں علی محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۱۸۵۔ میاں عباس خاں۔ کہوہار۔ ۔۔۔گجرات ۱۸۶۔ میاں قطب الدین صاحب۔ کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۱۸۷۔میاں اللہ دتا خان صاحب اڑیالہ۔ ۔۔۔ ؍؍ ۱۸۸۔ محمد حیات صاحب۔ چک جانی ۔۔۔ ؍؍ ۱۸۹۔ مخدوم مولوی محمد صدیق صاحب۔ بھیرہ ۱۹۰۔ عبد المغنی صاحب فرزند رشید مولوی برہان الدین صاحب جہلمی ۱۹۱ ۔ قاضی چراغ الدین۔ کوٹ قاضی۔ گوجرانوالہ ۱۹۲۔ میاں فضل الدین صاحب قاضی کوٹ ۱۹۳۔ میاں علم الدین صاحب کوٹلہ فقیر۔ جہلم ۱۹۴۔ قاضی میر محمد صاحب۔۔۔۔۔۔۔ کوٹ کھلیان ۱۹۵۔ میاں اللہ دتا صاحب۔۔۔ نت۔ گوجرانوالہ ۱۹۶۔ میاں سلطان محمد صاحب۔۔۔ ؍؍ ۱۹۷۔ مولوی خان ملک صاحب کھیوال ۱۹۸۔ میاں الہ بخش صاحب علاقہ بند۔ امرتسر ۱۹۹۔ مولوی عنایت اللہ مدرس ۔۔۔ مانانوالہ ۲۰۰۔ منشی میرا بخش صاحب ۔۔۔ گوجرانوالہ ۲۰۱۔ مولوی احمد جان صاحب مدرس ؍؍ ۲۰۲۔ مولوی حافظ احمد دین چک سکندر گجرات ۲۰۳۔ مولوی عبد الرحمن صاحب کہیوال۔ جہلم ۲۰۴۔ میاں مہر دین صاحب۔۔۔۔ لالہ موسیٰ ۲۰۵۔ میاں ابراہیم صاحب پنڈوری۔ جہلم ۲۰۶۔ سید محمود شاہ صاحب فتح پور۔ گجرات ۲۰۷۔ محمد جو صاحب۔۔۔۔ امرتسر ۲۰۸۔ منشی شاہ دین صاحب۔ دینا۔ جہلم ۲۰۹۔ منشی روشن دین صاحب۔ ڈنڈوت۔ ؍؍ ۲۱۰۔ حکیم فضل الٰہی صاحب۔۔۔۔ لاہور ۲۱۱ ۔شیخ عبد اللہ دیوانچند صاحب کمپونڈر ؍؍ ۲۱۲۔ منشی محمد علی صاحب ؍؍ ۲۱۳۔ منشی امام الدین صاحب کلرک ؍؍ ۲۱۴۔ منشی عبد الرحمن صاحب ؍؍ ۔۔۔ ؍؍ ۲۱۵۔خواجہ جمال الدین صاحب بی اے لاہور حال جموں ۲۱۶۔ منشی مولا بخش صاحب کلرک۔۔۔ لاہور ۲۱۷۔ شیخ محمد حسین صاحب مراد آبادی۔۔۔ پٹیالہ ۲۱۸۔ عالم شاہ صاحب کھاریاں۔۔۔۔۔۔ گجرات ۲۱۹۔ مولوی شیر محمد صاحب ہوہن۔۔۔ شاہپور ۲۲۰ ۔ میاں محمد اسحٰق صاحب اوورسیر بھیرہ۔ حال ممباسہ ۲۲۱۔ میرزا اکبر بیگ صاحب۔۔۔۔ کلانور ۲۲۲۔ مولوی محمد یوسف صاحب۔۔۔۔ سنور ۲۲۳۔ میاں عبد الصمد صاحب۔۔۔۔ ؍؍ ۲۲۴۔ منشی عطا محمد صاحب۔۔۔۔۔۔ سیالکوٹ ۲۲۵۔ شیخ مولا بخش صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۲۲۶۔سید خصیلت علی شاہ صاحب ڈپٹی انسپکٹر ڈنگہ ۲۲۷۔منشی رستم علی صاحب کورٹ انسپکٹر گورداسپورہ ۲۲۸۔ سید احمد علی شاہ صاحب۔۔۔۔۔۔ سیالکوٹ

    Ruhani-Khazain-Vol-11_Page_363.png
  4. ‏ مارچ 31, 2020 #4
    مبشر شاہ

    مبشر شاہ رکن عملہ منتظم اعلی

    328 ۲۲۹۔ ماسٹر غلام محمد صاحب سیالکوٹ ۲۳۰۔ حکیم محمد دین صاحب۔۔۔۔۔ ؍؍ ۲۳۱۔ میاں غلام محی الدین صاحب ؍؍ ۲۳۲۔ میاں عبد العزیز صاحب ؍؍ ۲۳۳۔ منشی محمد دین صاحب ؍؍ ۲۳۴۔ منشی عبد المجید صاحب اوجلہ۔ گورداسپور ۲۳۵۔ میاں خدا بخش صاحب۔ بٹالہ ؍؍ ۲۳۶۔منشی حبیب الرحمن صاحب حاجی پور۔ کپور تھلہ ۲۳۷۔محمد حسین صاحب لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ ۲۳۸۔منشی زین الدین محمد ابراہیم۔ انجینئر۔ بمبئی ۲۳۹۔سید فضل شاہ صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۲۴۰۔ سید ناصر شاہ صاحب سب اوورسیر۔ اوڑی کشمیر ۲۴۱۔ منشی عطا محمد صاحب چنیوٹ جھنگ ۲۴۲۔ شیخ نور احمد صاحب جالندھر۔حال ممباسہ ۲۴۳۔ منشی سرفراز خان صاحب۔ جھنگ ۲۴۴۔ مولوی سید محمد رضوی صاحب۔ حیدر آباد ۲۴۵۔ مفتی فضل الرحمن صاحب معہ اہلیہ۔ بھیرہ ۲۴۶۔ حافظ محمد سعید صاحب بھیرہ۔ حال لندن ۲۴۷۔ مستری قطب الدین صاحب بھیرہ ۲۴۸۔ مستری عبد الکریم صاحب ؍؍ ۲۴۹۔ مستری غلام الٰہی صاحب ؍؍ ۲۵۰۔ میاں عالم دین صاحب ؍؍ ۲۵۱۔ میاں محمد شفیع صاحب ؍؍ ۲۵۲۔ میاں نجم الدین صاحب ؍؍ ۲۵۳۔ میاں خادم حسین صاحب ؍؍ ۲۵۴۔ بابو غلام رسول صاحب ؍؍ ۲۵۵۔ شیخ عبدا لرحمن صاحب نومسلم ؍؍ ۲۵۶۔ مولوی سردار محمد صاحب لون میانی ۲۵۷۔ مولوی دوست محمد صاحب ؍؍ ۲۵۸۔ مولوی حافظ محمد صاحب بھیرہ۔ حال کشمیر ۲۵۹۔ مولوی شیخ قادر بخش صاحب۔ احمد آباد ۲۶۰۔ منشی اللہ داد صاحب کلرک چھاؤنی شاہپور ۲۶۱۔ میاں حاجی وریام خوشاب ۲۶۲۔ حافظ مولوی فضل دین صاحب ؍؍ ۲۶۳۔ سید دلدار علی صاحب۔بلہور۔۔۔ کانپور ۲۶۴۔ سید رمضان علی صاحب ۔ ؍؍ ؍؍ ۲۶۵۔ سید جیون علی صاحب پلول۔ حال الہ آباد ۲۶۶۔ سید فرزند حسین صاحب چاند پور۔ ؍؍ ۲۶۷۔ سید اہتمام علی صاحب۔ موہر ونڈا۔ ؍؍ ۲۶۸۔حاجی نجف علی صاحب۔ کٹٹرہ محلہ۔ الہ آباد ۲۶۹۔شیخ گلاب صاحب ؍؍ ؍؍ ۲۷۰۔شیخ خدا بخش صاحب ؍؍ ؍؍ ۲۷۱۔ حکیم محمد حسین صاحب لاہور ۲۷۲۔ میاں عطا محمد صاحب سیالکوٹ ۲۷۳۔ میاں محمد دین صاحب جموں ۲۷۴۔ میاں محمد حسن صاحب عطار لدہیانہ ۲۷۵۔سید نیاز علی صاحب۔ مدایوان حال رامپور ۲۷۶۔ ڈاکٹر عبد الشکور صاحب۔۔۔۔ سرسہ ۲۷۷۔شیخ حافظ الہ دین صاحب بی اے جہاوریاں ۲۷۸۔ میاں عبد السبحان۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۲۷۹۔ میاں شہامت خاں ۔۔۔۔۔۔ نادون ۲۸۰۔مولوی عبد الحکیم صاحب دھار وار علاقہ بمبئی ۲۸۱۔ قاضی عبد اللہ صاحب کوٹ قاضی ۲۸۲۔ عبد الرحمن صاحب پٹواری سنوری ۲۸۳۔ برکت علی صاحب مرحوم۔ تھہ غلام نبی ۲۸۴۔ شہاب الدین صاحب ؍؍ ۲۸۵۔ صاحب دین صاحب طہال۔ گجرات ۲۸۶۔ مولوی غلام حسن مرحوم۔۔۔۔۔۔ دینہ نگر ۲۸۷۔ نواب دین صاحب مدرس ۔۔۔ دینا نگر ۲۸۸۔احمد دین صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منارہ ۲۸۹۔ عبد اللہ صاحب قرآنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۲۹۰۔ کرم الٰہی صاحب کمپازیٹر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۲۹۱۔ سید محمد آفندی ترکی ۲۹۲۔ عثمان عرب صاحب طائف شریف ۲۹۳۔ عبد الکریم صاحب مرحوم۔۔۔۔ چمارو ۲۹۴۔ عبد الوہاب صاحب بغدادی ۲۹۵۔میاں کریم بخش صاحب مرحوم مغفور جمال پور ضلع لدھیانہ۔ ۲۹۶۔عبد العزیز صاحب عرف عزیز الدین ناسنگ ۲۹۷ ۔ حافظ غلام محی الدین صاحب بھیرہ حال قادیان ۲۹۸۔محمد اسمٰعیل صاحب نقشہ نویس کالکا ریلوے ۲۹۹۔ احمد دین صاحب ۔چک۔ کھاریاں ۳۰۰۔ محمد امین کتاب فروش جہلم ۳۰۱۔ مولوی محمود حسن خان صاحب مدرس ملازم پٹیالہ ۳۰۲۔ محمد رحیم الدین حبیب والہ ۳۰۳۔ شیخ حرمت علی صاحب کراری الہ آباد ۳۰۴۔ میاں نور محمد صاحب غوث گڑھ۔۔۔ پٹیالہ ۳۰۵۔ مستری اسلام احمد صاحب۔۔۔ بھیرہ ۳۰۶۔ حسینی خاں صاحب۔۔۔۔۔۔ الہ آباد ۳۰۷۔ قاضی رضی الدین صاحب۔۔۔ اکبر آباد ۳۰۸۔ سعد اللہ خان صاحب۔۔۔۔۔۔ الہ آباد ۳۰۹۔مولوی عبد الحق صاحب ولد مولوی فضل حق صاحب مدرس سامانہ پٹیالہ ۳۱۰۔ مولوی حبیب اللہ صاحب مرحوم محافظ دفتر پولیس۔ جہلم ۳۱۱۔ رجب علی صاحب پنشنر ساکن جہونسی کہنہ ضلع الہ آباد ۳۱۲۔ ڈاکٹر سید منصب علی صاحب پنشنر۔ الہ آباد ۳۱۳۔میاں کریم اللہ صاحب سارجنٹ پولس جہلم ** 328 ۲۲۹۔ ماسٹر غلام محمد صاحب سیالکوٹ ۲۳۰۔ حکیم محمد دین صاحب۔۔۔۔۔ ؍؍ ۲۳۱۔ میاں غلام محی الدین صاحب ؍؍ ۲۳۲۔ میاں عبد العزیز صاحب ؍؍ ۲۳۳۔ منشی محمد دین صاحب ؍؍ ۲۳۴۔ منشی عبد المجید صاحب اوجلہ۔ گورداسپور ۲۳۵۔ میاں خدا بخش صاحب۔ بٹالہ ؍؍ ۲۳۶۔منشی حبیب الرحمن صاحب حاجی پور۔ کپور تھلہ ۲۳۷۔محمد حسین صاحب لنگیاں والی۔ گوجرانوالہ ۲۳۸۔منشی زین الدین محمد ابراہیم۔ انجینئر۔ بمبئی ۲۳۹۔سید فضل شاہ صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۲۴۰۔ سید ناصر شاہ صاحب سب اوورسیر۔ اوڑی کشمیر ۲۴۱۔ منشی عطا محمد صاحب چنیوٹ جھنگ ۲۴۲۔ شیخ نور احمد صاحب جالندھر۔حال ممباسہ ۲۴۳۔ منشی سرفراز خان صاحب۔ جھنگ ۲۴۴۔ مولوی سید محمد رضوی صاحب۔ حیدر آباد ۲۴۵۔ مفتی فضل الرحمن صاحب معہ اہلیہ۔ بھیرہ ۲۴۶۔ حافظ محمد سعید صاحب بھیرہ۔ حال لندن ۲۴۷۔ مستری قطب الدین صاحب بھیرہ ۲۴۸۔ مستری عبد الکریم صاحب ؍؍ ۲۴۹۔ مستری غلام الٰہی صاحب ؍؍ ۲۵۰۔ میاں عالم دین صاحب ؍؍ ۲۵۱۔ میاں محمد شفیع صاحب ؍؍ ۲۵۲۔ میاں نجم الدین صاحب ؍؍ ۲۵۳۔ میاں خادم حسین صاحب ؍؍ ۲۵۴۔ بابو غلام رسول صاحب ؍؍ ۲۵۵۔ شیخ عبدا لرحمن صاحب نومسلم ؍؍ ۲۵۶۔ مولوی سردار محمد صاحب لون میانی ۲۵۷۔ مولوی دوست محمد صاحب ؍؍ ۲۵۸۔ مولوی حافظ محمد صاحب بھیرہ۔ حال کشمیر ۲۵۹۔ مولوی شیخ قادر بخش صاحب۔ احمد آباد ۲۶۰۔ منشی اللہ داد صاحب کلرک چھاؤنی شاہپور ۲۶۱۔ میاں حاجی وریام خوشاب ۲۶۲۔ حافظ مولوی فضل دین صاحب ؍؍ ۲۶۳۔ سید دلدار علی صاحب۔بلہور۔۔۔ کانپور ۲۶۴۔ سید رمضان علی صاحب ۔ ؍؍ ؍؍ ۲۶۵۔ سید جیون علی صاحب پلول۔ حال الہ آباد ۲۶۶۔ سید فرزند حسین صاحب چاند پور۔ ؍؍ ۲۶۷۔ سید اہتمام علی صاحب۔ موہر ونڈا۔ ؍؍ ۲۶۸۔حاجی نجف علی صاحب۔ کٹٹرہ محلہ۔ الہ آباد ۲۶۹۔شیخ گلاب صاحب ؍؍ ؍؍ ۲۷۰۔شیخ خدا بخش صاحب ؍؍ ؍؍ ۲۷۱۔ حکیم محمد حسین صاحب لاہور ۲۷۲۔ میاں عطا محمد صاحب سیالکوٹ ۲۷۳۔ میاں محمد دین صاحب جموں ۲۷۴۔ میاں محمد حسن صاحب عطار لدہیانہ ۲۷۵۔سید نیاز علی صاحب۔ مدایوان حال رامپور ۲۷۶۔ ڈاکٹر عبد الشکور صاحب۔۔۔۔ سرسہ ۲۷۷۔شیخ حافظ الہ دین صاحب بی اے جہاوریاں ۲۷۸۔ میاں عبد السبحان۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۲۷۹۔ میاں شہامت خاں ۔۔۔۔۔۔ نادون ۲۸۰۔مولوی عبد الحکیم صاحب دھار وار علاقہ بمبئی ۲۸۱۔ قاضی عبد اللہ صاحب کوٹ قاضی ۲۸۲۔ عبد الرحمن صاحب پٹواری سنوری ۲۸۳۔ برکت علی صاحب مرحوم۔ تھہ غلام نبی ۲۸۴۔ شہاب الدین صاحب ؍؍ ۲۸۵۔ صاحب دین صاحب طہال۔ گجرات ۲۸۶۔ مولوی غلام حسن مرحوم۔۔۔۔۔۔ دینہ نگر ۲۸۷۔ نواب دین صاحب مدرس ۔۔۔ دینا نگر ۲۸۸۔احمد دین صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منارہ ۲۸۹۔ عبد اللہ صاحب قرآنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاہور ۲۹۰۔ کرم الٰہی صاحب کمپازیٹر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؍؍ ۲۹۱۔ سید محمد آفندی ترکی ۲۹۲۔ عثمان عرب صاحب طائف شریف ۲۹۳۔ عبد الکریم صاحب مرحوم۔۔۔۔ چمارو ۲۹۴۔ عبد الوہاب صاحب بغدادی ۲۹۵۔میاں کریم بخش صاحب مرحوم مغفور جمال پور ضلع لدھیانہ۔ ۲۹۶۔عبد العزیز صاحب عرف عزیز الدین ناسنگ ۲۹۷ ۔ حافظ غلام محی الدین صاحب بھیرہ حال قادیان ۲۹۸۔محمد اسمٰعیل صاحب نقشہ نویس کالکا ریلوے ۲۹۹۔ احمد دین صاحب ۔چک۔ کھاریاں ۳۰۰۔ محمد امین کتاب فروش جہلم ۳۰۱۔ مولوی محمود حسن خان صاحب مدرس ملازم پٹیالہ ۳۰۲۔ محمد رحیم الدین حبیب والہ ۳۰۳۔ شیخ حرمت علی صاحب کراری الہ آباد ۳۰۴۔ میاں نور محمد صاحب غوث گڑھ۔۔۔ پٹیالہ ۳۰۵۔ مستری اسلام احمد صاحب۔۔۔ بھیرہ ۳۰۶۔ حسینی خاں صاحب۔۔۔۔۔۔ الہ آباد ۳۰۷۔ قاضی رضی الدین صاحب۔۔۔ اکبر آباد ۳۰۸۔ سعد اللہ خان صاحب۔۔۔۔۔۔ الہ آباد ۳۰۹۔مولوی عبد الحق صاحب ولد مولوی فضل حق صاحب مدرس سامانہ پٹیالہ ۳۱۰۔ مولوی حبیب اللہ صاحب مرحوم محافظ دفتر پولیس۔ جہلم ۳۱۱۔ رجب علی صاحب پنشنر ساکن جہونسی کہنہ ضلع الہ آباد ۳۱۲۔ ڈاکٹر سید منصب علی صاحب پنشنر۔ الہ آباد ۳۱۳۔میاں کریم اللہ صاحب سارجنٹ پولس جہلم **

    Ruhani-Khazain-Vol-11_Page_364.png
  5. ‏ مارچ 31, 2020 #5
    مبشر شاہ

    مبشر شاہ رکن عملہ منتظم اعلی

    329 اب دیکھو یہ تین سو تیرہ مخلص جو اس کتاب میں درج ہیں یہ اسی پیشگوئی کا مصداق ہے جو احادیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں پائی جاتی ہے۔ پیشگوئی میں کدعہ کا لفظ بھی ہے جو صریح قادیان کے نام کو بتلا رہا ہے پس تمام مضمون اس حدیث کا یہ ہے کہ وہ مہدی موعود قادیان میں پیدا ہوگا۔ اور اس کے پاس ایک کتاب چھپی ہوئی ہوگی۔ جس میں تین سو ۳۱۳تیرہ اس کے دوستوں کے نام درج ہوں گے۔ سو ہریک شخص سمجھ سکتا ہے کہ یہ بات میرے اختیار میں تو نہیں تھی کہ میں ان کتابوں میں جو اس زمانہ سے ہزار برس پہلے دنیا میں شائع ہوچکی ہیں اپنے گاؤں قادیان کا نام لکھ دیتا۔ اور نہ میں نے چھاپہ کی کل نکالی ہے تا یہ خیال کیا جائے کہ میں نے اس غرض سے مطبع کو اس زمانہ میں ایجاد کیا ہے۔ اور نہ تین سو تیرہ مخلص اصحاب کا پیدا کرنا میرے اختیار میں تھا بلکہ یہ تمام اسباب خود خدا تعالیٰ نے پیدا کئے ہیں تاوہ اپنے رسول کریم کی پیشگوئی کو پورا کرے۔ مگر اس زمانہ کے مولویوں کی حالت پر سخت افسوس ہے کہ وہ نہیں چاہتے کہ کوئی پیشگوئی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری ہو۔ آتھم کی نسبت کیسی صفائی سے پیشگوئی پوری ہوئی۔ خداتعالیٰ کی الہامی شرط کے موافق اول آتھم سودائیوں کی طرح ڈرتا پھرا۔ اور بباعث شدت خوف شرط سے فائدہ اٹھایا۔ آخر بیباکی کی حالت میں خدا تعالیٰ کے قطعی الہام کے موافق واصل جہنم ہوا۔ اور یہی پیشگوئی تھی جس کی براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں بھی اب سے ستر۱۷ہ پہلے خبر دی گئی تھی۔ سو جیسا کہ اس پیشگوئی کی تکذیب میں پادریوں نے جھوٹ کی نجاست کھائی۔ عبد الحق اور عبد الجبار غزنویان وغیرہ مخالف مولویوں نے بھی وہ نجاست کھائی اور جیسا کہ عیسائیوں نے اسلام پر حملہ کیا انہوں نے بھی اسلام پر حملہ کیا۔ کیونکہ یہ نشان اسلام کی تائید میں تھا۔ سو ان لوگوں نے اسلام کی کچھ پرواہ نہ کی اور کچھ بھی حیا اور شرم اور تقویٰ سے کام نہ لیا۔ اسی لئے تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان لوگوں کا نام یہودی رکھا۔ اگر یہ لوگ آتھم کے بارے میں کوئی سچی نکتہ چینی کرتے تو ہمیں کچھ افسوس نہ تھا مگر ان لوگوں نے تو اس سچائی پر تھوکا جو آفتاب کی طرح چمک رہی تھی۔ عبد الحق غزنوی بار بار لکھتا ہے کہ پادریوں کی فتح ہوئی۔ ہم اس کے جواب میں بجز اس کے کیا کہیں اور کیا لکھیں کہ اے بدذات یہودی صفت پادریوں کا اس میں منہ کالا ہوا اور ساتھ ہی تیرا بھی۔ اور پادریوں پر ایک آسمانی لعنت پڑی اور ساتھ ہی وہ لعنت تجھ کو بھی کھا گئی۔ اگر تو سچا ہے تو اب ہمیں دکھلا کہ آتھم کہاں ہے۔ اے خبیث کب تک تو جئے گا۔ کیا تیرے لئے ایک دن موت کا مقرر نہیں۔ 329 اب دیکھو یہ تین سو تیرہ مخلص جو اس کتاب میں درج ہیں یہ اسی پیشگوئی کا مصداق ہے جو احادیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں پائی جاتی ہے۔ پیشگوئی میں کدعہ کا لفظ بھی ہے جو صریح قادیان کے نام کو بتلا رہا ہے پس تمام مضمون اس حدیث کا یہ ہے کہ وہ مہدی موعود قادیان میں پیدا ہوگا۔ اور اس کے پاس ایک کتاب چھپی ہوئی ہوگی۔ جس میں تین سو ۳۱۳تیرہ اس کے دوستوں کے نام درج ہوں گے۔ سو ہریک شخص سمجھ سکتا ہے کہ یہ بات میرے اختیار میں تو نہیں تھی کہ میں ان کتابوں میں جو اس زمانہ سے ہزار برس پہلے دنیا میں شائع ہوچکی ہیں اپنے گاؤں قادیان کا نام لکھ دیتا۔ اور نہ میں نے چھاپہ کی کل نکالی ہے تا یہ خیال کیا جائے کہ میں نے اس غرض سے مطبع کو اس زمانہ میں ایجاد کیا ہے۔ اور نہ تین سو تیرہ مخلص اصحاب کا پیدا کرنا میرے اختیار میں تھا بلکہ یہ تمام اسباب خود خدا تعالیٰ نے پیدا کئے ہیں تاوہ اپنے رسول کریم کی پیشگوئی کو پورا کرے۔ مگر اس زمانہ کے مولویوں کی حالت پر سخت افسوس ہے کہ وہ نہیں چاہتے کہ کوئی پیشگوئی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری ہو۔ آتھم کی نسبت کیسی صفائی سے پیشگوئی پوری ہوئی۔ خداتعالیٰ کی الہامی شرط کے موافق اول آتھم سودائیوں کی طرح ڈرتا پھرا۔ اور بباعث شدت خوف شرط سے فائدہ اٹھایا۔ آخر بیباکی کی حالت میں خدا تعالیٰ کے قطعی الہام کے موافق واصل جہنم ہوا۔ اور یہی پیشگوئی تھی جس کی براہین احمدیہ کے صفحہ ۲۴۱ میں بھی اب سے ستر۱۷ہ پہلے خبر دی گئی تھی۔ سو جیسا کہ اس پیشگوئی کی تکذیب میں پادریوں نے جھوٹ کی نجاست کھائی۔ عبد الحق اور عبد الجبار غزنویان وغیرہ مخالف مولویوں نے بھی وہ نجاست کھائی اور جیسا کہ عیسائیوں نے اسلام پر حملہ کیا انہوں نے بھی اسلام پر حملہ کیا۔ کیونکہ یہ نشان اسلام کی تائید میں تھا۔ سو ان لوگوں نے اسلام کی کچھ پرواہ نہ کی اور کچھ بھی حیا اور شرم اور تقویٰ سے کام نہ لیا۔ اسی لئے تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان لوگوں کا نام یہودی رکھا۔ اگر یہ لوگ آتھم کے بارے میں کوئی سچی نکتہ چینی کرتے تو ہمیں کچھ افسوس نہ تھا مگر ان لوگوں نے تو اس سچائی پر تھوکا جو آفتاب کی طرح چمک رہی تھی۔ عبد الحق غزنوی بار بار لکھتا ہے کہ پادریوں کی فتح ہوئی۔ ہم اس کے جواب میں بجز اس کے کیا کہیں اور کیا لکھیں کہ اے بدذات یہودی صفت پادریوں کا اس میں منہ کالا ہوا اور ساتھ ہی تیرا بھی۔ اور پادریوں پر ایک آسمانی لعنت پڑی اور ساتھ ہی وہ لعنت تجھ کو بھی کھا گئی۔ اگر تو سچا ہے تو اب ہمیں دکھلا کہ آتھم کہاں ہے۔ اے خبیث کب تک تو جئے گا۔ کیا تیرے لئے ایک دن موت کا مقرر نہیں۔

    Ruhani-Khazain-Vol-11_Page_365.png

اس صفحے کی تشہیر