1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. [IMG]
  3. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

مرزا قادیانی کی شریعت مین سود حلال

محمد زاھد نے 'سیرت رسول عربی اور مرزا قادیانی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ نومبر 12, 2016

  1. ‏ نومبر 12, 2016 #1
    محمد زاھد

    محمد زاھد رکن ختم نبوت فورم

    Soud By Mirza Full Page.png
  2. ‏ نومبر 30, 2016 #2
    خدمت گذار

    خدمت گذار رکن ختم نبوت فورم

    قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ نے مالی قربانی کی طرف توجہ دلاتے ہوئے فرمایا ہے :مَّن ذَا الَّذِي يُقْرِضُ اللَّهَ قَرْضًا حَسَنًا فَيُضَاعِفَهُ لَهُ أَضْعَافًا كَثِيرَةً۔(البقرۃ)یعنی ایسا کون شخص ہے جو اللہ کو اچھا قرض دے پھر اللہ اس کو کئی گنا بڑھا کر دے۔
    گذارش ہے کہ مندرجہ بالا کتاب "خطبہ الہامیہ "کا حوالہ اگر دوبارہ ذرا غور سےپڑھا جائے تو معلوم ہو جائے گا کہ یہاں اُس سُود کی بات نہیں ہو رہی جو دنیاوی قرضوں اور لین دین میں استعمال ہوتا ہے اور جو جماعت احمدیہ اور اسکے بانی کے نزدیک بھی حرام ہے ، بلکہ یہاں سود بمعنی "زیادہ دینے"کے استعمال ہو رہا ہے ۔
    حضرت مرزا صاحب سود کے حرام ہونے کے بارہ میں فرماتے ہیں :"مذہب اسلام میں جیسا کہ اپنی قوم سے سُود لینا حرام ہے ایسا ہی دوسری قوموں سے بھی سُود لینا حرام ہے''

    (چشمہ معرفت ۔ ص387)
    اس سے واضح ہو جاتا ہے کہ حضرت مرزا صاحب سود ، یعنی ربا کو قطعی حرام سمجھتے ہیں۔
    لہٰذا معترضہ حوالہ میں بھی حضرت مرزا صاحب نے سود کو "بڑھا کر دینے" کے معنوں میں بیان فرمایا ہے ۔
  3. ‏ ستمبر 24, 2017 #3
    فرح عطاریہ

    فرح عطاریہ رکن ختم نبوت فورم

    اللہ نے چندہ لازمی قرار نہیں دیا

اس صفحے کی تشہیر