1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. [IMG]
  3. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

کلمۃ اللہ فی حیات روح اللہ

حمزہ نے 'کلمۃ اللہ فی حیات روح اللہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ اپریل 20, 2015

لڑی کی کیفیت :
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں
  1. ‏ اپریل 20, 2015 #1
    حمزہ

    حمزہ رکن عملہ پراجیکٹ ممبر رکن ختم نبوت فورم

    کلمۃ اللہ فی حیات روح اللہ المعروف حیات عیسیٰ علیہ السلام

    مقدمہ دریبان امکان رفع جسمانی
    مرزا صاحب اور ان کی جماعت کا دعویٰ ہے کہ عیسیٰ علیہ السلام زندہ آسمان پر نہیں اٹھائے گئے بلکہ وفات پا کر مدفون ہو چکے ہیں اور دلیل یہ کہ کسی کا جسم عنصری آسمان پر جانا محال ہے۔(روحانی خزائن جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 126)

    جواب

    یہ ہے کہ جس طرح نبی اکرم محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کا جسد اطہر کے ساتھ لیلۃ المعراج میں جانا اور پھر وہاں سے واپس آنا حق ہے، اسی طرح عیسیٰ علیہ السلام کا بجسد العنصری آسمان پر اٹھایا جانا اور پھر قیامت کے قریب ان کا آسمان سے نازل ہونا بھی بلاشبہ حق اور ثابت ہے۔ جس طرح آدم علیہ السلام کا آسمان سے زمین کی طرف ہبوط ممکن ہے، اسی طرح حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا آسمان سے زمین کی طرف نزول بھی ممکن ہے۔ إِنَّ مَثَلَ عِيسَى عِنْدَ اللَّهِ كَمَثَلِ آَدَمَ۔ جعفر بن ابی طالب رضی اللہ عنہما کا فرشتوں کے ساتھ آسمانوں میں اڑنا صحیح اور قوی حدیثوں سے ثابت ہے، اسی وجہ سے ان کو جعفر طیار کے لقب سے یاد کیا جاتا ہے۔

    وأخرج الطبراني بإسناد حسن عن عبد الله بن جعفر قال: قال لي رسول الله صلى الله عليه وسلم: هنيئا لك أبوك يطير مع الملائكة في السماء“۔(شرح الزرقانی علی المواہب اللدنیہ جلد 3 صفحہ 352 مطبوعہ دارالکتب العلمیہ۔ فتح الباری جلد7 صفحہ 76 الرقم:3709 مطبوعہ دارالمعرفة بیروت، مختصر تلخیض ذہبی جلد 2 صفحہ 1119 مطبوعہ دارالعاصمة ریاض، مجمع الزوائد جلد 9 صفحہ 237 الرقم: 15498 مطبوعہ مکتبہ القدسی قاہرہ، المعجم الکبیر للطبرانی جلد 14 صفحہ 147 الرقم:14773)

    ترجمہ: ”امام طبرانی نے باسناد حسن عبداللہ کے بیٹے جعفر سے روایت کیا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے سے ایک بار یہ ارشاد فرمایا کہ اے جعفر کے بیٹے عبد اللہ تجھ کو مبارک ہو، تیرا باپ فرشتوں کے ساتھ آسمانوں میں اڑتا پھرتا ہے“۔

    اور ایک اور روایت میں یہ ہے کہ جعفرؓ جبرئیل و میکائل کے ساتھ اڑتا پھرتا ہے۔ ان ہاتھوں کے عوض میں جو غزوہ موتہ میں کٹ گئے تھے اللہ تعالی نے ان کو ملائکہ کی طرح دو بازو عطا فرما دیے ہیں اور اس روایت کی سند نہایت جید اور عمدہ ہے۔

    اور حضرت علی کرم اللہ وجہ کا اس بارے میں ایک شعر ہے:

    وجعَفر الذي يضحي ويمسي
    يطيرُ مع الملائكة ابن اُمّي

    ترجمہ: وہ جعفر جو صبح و شام فرشتوں کے ساتھ اڑتا ہے وہ میری ہی ماں کا بیٹا ہے۔

    اور علی ہذا عامر بن فہیرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا غزوہ بیرمعونہ میں شہید ہونا اور پھر ان کا آسمان پر اٹھایا جانا روایات میں مذکور ہے۔ جیسا کہ حافظ امام ابن حجر عسقلانی نے الإصابۃ فی تمییز الصحابۃ جلد 3 صفحہ 482 الرقم:4433، جلد 1 صفحہ 559الرقم:1059 مطبوعہ دارالکتب العلمیہ بیروت میں، حافظ ابن عبد البر نے الاستیعاب فی معرفۃ الأصحاب جلد 2 صفحہ 797 الرقم:1338 مطبوعہ دار الجیل بیروت میں اور علامہ زرقانی نے شرح الزرقانی علی المواہب اللدنیہ جلد 2 صفحہ 503 مطبوعہ دارالکتب العلمیہ میں ذکر کیا ہے۔ جبار بن سلمیٰ جو عامر بن فہیرہ کے قاتل تھے وہ اسی واقعہ کو دیکھ کر ضحاک بن سفیان کلابی کی خدمت میں حاضر ہو کر مشرف باسلام ہوئے اور یہ کہا:

    وَدَعَانِي إِلَى الْإِسْلَامِ مَا رَأَيْتُ مِنْ مَقْتَلِ عَامِرِ بْنِ فُهَيْرَةَ، وَمِنْ رَفْعِهِ إِلَى السَّمَاءِ“۔(دلائل النبوۃ للبیہقی جلد 3 صفحہ 353 دارالکتب العلمیہ بیروت، تاریخ دمشق جلد 4 صفحہ 344 الرقم:1102 مطبوعہ دارالفکر بیروت)
    ترجمہ: عامر بن فہیرہ کا شہید ہونا اور آسمان پر اٹھایا جانا میرے اسلام لانے کا باعث بنا۔

    ضحاک نے یہ تمام واقعہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت بابرکت میں لکھ کر بھیجا۔ اس آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:

    فَإِنَّ الْمَلائِكَةَ وَارَتْ جُثَّتَهُ وَأُنْزِلَ عِلِّيِّينَ“۔(تاریخ دمشق جلد 4 صفحہ 344 الرقم:1102 مطبوعہ دارالفکر بیروت)
    ترجمہ: فرشتوں نے اس کے حبثه کو چھپا لیا اور وہ علیین میں اتارے گئے۔

    ضحاک ابن سفیان کے اس تمام واقعہ کو امام بیہقی رحمۃ اللہ علیہ(دلائل النبوۃ للبیہقی جلد 3 صفحہ 353 دارالکتب العلمیہ بیروت) اور ابو نعیم اصفہانی رحمۃ اللہ علیہ(دلائل النبوۃ لأبی نعیم جلد 1 صفحہ 512 الرقم:440 مطبوعہ دار النفائس بیروت)دونوں نے اپنی اپنی دلائل النبوۃ میں بیان کیا۔

    اور حافظ عسقلانی نے الإصابۃ فی تمییز الصحابۃ میں جبار بن سلمی کے تذکرہ میں اس واقعہ کی طرف اجمالاً اشارہ فرمایا ہے۔

    شیخ جلال الدین سیوطی شرح الصدور میں فرماتے ہیں کہ عامر بن فہیرہ رضی اللہ عنہ کے آسمان پر اٹھائے جانے کے واقعہ کو ابن سعد اور حاکم اور موسی بن عقبہ نے بھی روایت کیا ہے۔(شرح الصدور بشرح حال الموتى والقبور صفحہ 251 مطبوعہ دار المعرفہ لبنان)غرض یہ کہ یہ واقعہ متعدد اسانید اور مختلف روایات سے ثابت اور محقق ہے۔

    واقعہ رجیع میں جب قریش نے خبیب بن عدی رضی اللہ عنہ کو سولی پر لٹکایا تو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے عمرو بن امیہ ضمری رضی اللہ عنہ کو خبیبؓ کی نعش اتار لانے کے لیے روانہ فرمایا۔ عمرو بن امیہ رضی اللہ عنہ وہاں پہنچے اور خبیبؓ کی نعش کو اتارا۔ دفعتاً ایک دھماکہ سنائی دیا، پیچھے پھر کر دیکھا، اتنی دیر میں نعش غائب ہو گئی۔ عمرو بن امیہ رضی اللہ فرماتے ہیں گویا زمین نے ان کو نگل لیا۔ اب تک اس کا کوئی نشان نہیں ملا۔ اس روایت کو امام ابن حنبل رحمۃ اللہ علیہ نے اپنی مسند میں روایت کیا ہے۔

    شیخ جلال الدین سیوطی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ خبیب رضی اللہ عنہ کو زمین نے نگلا اسی وجہ سے ان کا لقب بلیع الارض ہو گیا۔ اور ابو نعیم اصفہانی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں صحیح یہ ہے کہ عامر بن فہیرہ کی طرح خبیب کو بھی فرشتے آسمان پر اٹھا لے گئے۔ ابو نعیم کہتے ہیں کہ حق تعالیٰ نے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو آسمان پر اٹھایا، اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی امت میں عامر بن فہیرہ اور خبیب بن عدی اور علاء بن حضرمی کو آسمان پر اٹھایا۔ رضوان اللہ اجمعین۔

    علماء انبیاء کے وارث ہوتے ہیں۔ اولیاء کا الہام و کرامت انبیاء کرام کی وحی اور معجزات کی وراثت ہے۔

    وَمِمَّا يُقَوي قصَّة الرّفْع إِلَى السَّمَاء مَا أخرجه النَّسَائِيّ وَالْبَيْهَقِيّ وَالطَّبَرَانِيّ وَغَيرهم من حَدِيث جَابر أَن طَلْحَة أُصِيبَت أنامله يَوْم أحد فَقَالَ حس فَقَالَ رَسُول الله صلى الله عَلَيْهِ وَسلم لَو قلت بِسم الله لَرَفَعَتْك الْمَلَائِكَة وَالنَّاس ينظرُونَ إِلَيْك حَتَّى تلج بك فِي جو السَّمَاء السَّمَاء“۔(شرح الصدور بشرح حال الموتى والقبور صفحہ 252 مطبوعہ دار المعرفہ لبنان)

    شیخ جلال الدین سیوطی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ ”عامر بن فہیرہ اور خبیب رضی اللہ عنھما کے واقعہ رافع الی السماء کی وہ واقعہ بھی تائید کرتا ہے جس کو نسائی اور بیہقی اور طبرانی نے جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنھما سے روایت کیا ہے کہ غزوہ احد میں حضرت طلحہ رضی اللہ عنہ کی انگلیاں زخمی ہو گئیں تو اس تکلیف کی حالت میں زبان مبارک سے”حس“ یہ لفظ نکلا۔ اس پر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اگر تو بجائے ”حس“ کے ”بسم اللہ“ کہتا تو لوگ دیکھتے ہوئے ہوتے اور فرشتے تجھ کو اٹھا کر لے جاتے یہاں تک کے تجھ کو آسمان میں لے کر گھس جاتے“۔

    أخرجه إِبْنِ أبي الدُّنْيَا فِي ذكر الْمَوْت عَن زيد بن أسلم قَالَ كَانَ فِي بني إِسْرَائِيل رجل قد أعتزل النَّاس فِي كَهْف جبل وَكَانَ أهل زَمَانه إِذا قحطوا إستغاثوا بِهِ فَدَعَا الله فسقاهم فَمَاتَ فَأخذُوا فِي جهازه فَبَيْنَمَا هم كَذَلِك إِذا هم بسرير يرفرف فِي عنان السَّمَاء حَتَّى إنتهى إِلَيْهِ فَقَامَ رجل فَأَخذه فَوَضعه على السرير فارتفع السرير وَالنَّاس ينظرُونَ إِلَيْهِ فِي الْهَوَاء حَتَّى غَابَ عَنْهُم“۔(شرح الصدور بشرح حال الموتى والقبور صفحہ 251 مطبوعہ دار المعرفہ لبنان)

    ”ابن ابی الدنیا نے ذکر الموتى میں زید بن اسلم سے روایت کیا ہے کہ بنی اسرائیل میں ایک عابد تھا کہ جو پہاڑ میں رہتا تھا۔ جب قحط ہوتا لوگ اس سے بارش کی دعا کراتے، وہ دعا کرتا، اللہ تعالیٰ اس کی دعا کی برکت سے بارانِ رحمت نازل فرماتا۔ اس عابد کا انتقال ہو گیا، لوگ اس کی تجہیز و تکفین میں مشغول تھے اچانک ایک تخت آسمان سے اترتا ہوا نظر آیا یہاں تک کہ اس عابد کے قریب آ کر رکھا گیا۔ ایک شخص نے کھڑے ہو کر اس عابد کو اس تخت پر رکھ دیا۔ اس کے بعد وہ تخت اٹھتا گیا، لوگ دیکھتے رہے۔ یہاں تک کہ وہ غائب ہو گیا“۔

    اور حضرت ہارون علیہ الصلوۃ والسلام کے جنازہ کا آسمان پر اٹھایا جانا اور پھر حضرت موسی علیہ السلام کی دعا سے آسمان سے زمین پر اتر آنا مستدرک حاکم میں مفصل مذکور ہے۔

    مقصد ان واقعات کے نقل کرنے کا یہ ہے کہ منکرین اور ملحدین خوب سمجھ لیں کہ حق جلشانہ نے اپنے محبین اور مخلصین کی اس خاص طریقہ سے بارہا تائید فرمائی ہے کہ ان کو صحیح و سالم فرشتوں سے آسمانوں پر اٹھوا لیا اور دشمن دیکھتے ہی رہ گئے۔ تاکہ اس کی قدرت کاملہ کا ایک نشان اور کرشمہ ظاہر ہو اور اس کے نیک بندوں کی کرامت اور منکرین معجزات و کرامات کی رسوائی و ذلت آشکارا ہو۔ اور اس قسم کے خوارق کا ظہور مومنین اور مصدقین کے موجب طمانیت اور مکذبین کے لیے اتمام حجت کا کام دے۔

    ان واقعات سے یہ امر بخوبی ثابت ہو گیا کہ کسی جسم عنصری کا آسمان اٹھایا جانا نہ قانون قدرت کے خلاف ہے نہ سنت اللہ کے متصادم٭۔ بلکہ ایسی حالت میں سنت اللہ یہی ہے کہ اپنے خاص بندوں کو آسمان پر اٹھا لیا جائے، تاکہ اس مالک مقتدر کی قدرت کا کرشمہ ظاہر ہو اور لوگوں کو معلوم ہو جائے کہ حق تعالیٰ کی اپنے خاص الخاص بندوں کے ساتھ یہی سنت ہے کہ ایسے وقت میں ان کو آسمان پر اٹھا لیتا ہے۔ غرض یہ کہ جسم عنصری ک آسمان پر اٹھائے جانا قطعاً محال نہیں بلکہ ممکن اور واقع ہے اور اسی طرح کسی جسم عنصری کا بغیر کھائے اور پئے زندگی بسر کرنا بھی محال نہیں، اصحاب کہف کا تین سو سال تک بغیر کھائے، پئے زندہ رہنا قرآن کریم میں مذکور ہے: وَلَبِثُوا فِي كَهْفِهِمْ ثَلَاثَ مِائَةٍ سِنِينَ وَازْدَادُوا تِسْعًا(الکہف18:25)اس سے مرزا صاحب کا یہ وسوسہ بھی زائل ہو گیا کہ جو شخص اسی یا نوے سال کو پہنچ جاتا ہے وہ مخص نادان ہو جاتا ہے۔ کما قال تعالیٰ:وَمِنكُم مَّن يُرَدُّ إِلَىٰ أَرْذَلِ الْعُمُرِ لِكَيْلَا يَعْلَمَ مِن بَعْدِ عِلْمٍ شَيْئًا(الحج22:05)اس لیے کہ ”أرذل العمر“ کی تفسیر میں اسی یا نوے سال کی قید مرزا صاحب نے اپنی طرف سے لگائی ہے۔ قرآن و حدیث میں کہیں قید نہیں۔ اصحاب کہف تین سو سال تک کہیں نادان نہیں ہو گئے۔ اور علی ہذا حضرت آدم علیہ السلام اور حضرت نوح علیہ السلام صدہا سال زندہ رہے اور ظاہر ہے کہ نبی کے علم اور عقل کا زائل ہونا ناممکن اور محال ہے۔

    حدیث میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جب دجال ظاہر ہو گا تو شدید قحط ہو گا اور اہل ایمان کو کھانا میسر نہ آئے گا۔ اس پر صحابہ کرامؓ نے عرض کیا: یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس وقت اہل ایمان کا کیا حال ہو گا؟۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ”يُجْزِيهِمْ مَا يُجْزِي أَهْلَ السَّمَاءِ مِنَ التَّسْبِيحِ وَالتَّقْدِيسِ“۔(مسند احمد بن حنبل جلد 45 صفحہ 561 الرقم:25579 من حدیث أسماء بنت یزید رضی اللہ عنہا مطبوعہ مؤسسة الرسالة)یعنی اس وقت اہل ایمان کو فرشتوں کی طرح تسبیح و تقدیس ہی غذا کا کام دے گی۔

    اور حدیث میں ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کئی کئی دن کا صوم وصال رکھتے اور یہ فرماتے:

    أَيُّكُمْ مِثْلِي؟ إِنِّي أَبِيتُ يُطْعِمُنِي رَبِّي وَيَسْقِينِي“۔(صحیح مسلم جلد 2 صفحہ 774 الرقم:1103 مطبوعہ دار احیاء التراث العربی بیروت) تم میں سے کون شخص میری مثل ہے؟(جو کہ صوم وصال میں میری براری کرے) میرا پروردگار مجھے غیب سے کھلاتا ہے اور پلاتا ہے، یہ غیبی طعام میری غذا ہے۔ معلوم ہوا کہ طعام و شراب عام ہے، خواہ حسی ہو یا غیبی ہو۔ لہٰذا وَمَا جَعَلْنَاهُمْ جَسَدًا لَّا يَأْكُلُونَ الطَّعَامَ(الانبیاء21:8) سے یہ استدلال کرنا کہ جسم عنصری کا بغیر طعام و شراب کے زندہ رہنا ناممکن ہے، غلط ہے۔ اس لیے کہ طعام و شراب عام ہے کہ خواہ حسی ہو یا معنوی۔ حضرت آدم علیہ السلام اکل شجرہ سے پہلے جنت میں ملائکہ کی طرح زندگی بسر فرماتے تھے، تسبیح و تہلیل ہی ان کا ذکر تھا۔ پس کیا حضرت مسیح جو کہ نفخ جبرئیل سے پیدا ہونے کی وجہ سے پیدا ہونے کی وجہ سے جبرئیل امین کی طرح تسبیح و تہلیل سے زندگی بسر نہیں فرما سکتے؟۔ کما قال تعالیٰ: ان مثل عیسیٰ عند اللہ کمثل آدم۔ کیا اصحاب کہف کا تین سو نو سال تک بغیر کھائے اور پئے زندہ رہنا اور حضرت یونس علیہ السلام کا شکم ماہی(مچھلی) میں بغیر کھائے پئے زندہ رہنا قرآن کریم میں صراحتاً مذکور نہیں؟۔ اور یونس علیہ السلام کے بارے میں حق تعالیٰ کا ارشاد:فَلَوْلَا أَنَّهُ كَانَ مِنَ الْمُسَبِّحِينَoلَلَبِثَ فِي بَطْنِهِ إِلَىٰ يَوْمِ يُبْعَثُونَ(الصافات37:143،144)اس پر صاف دلالت کرتا ہے کہ یونس علیہ السلام اگر مسبحين میں نہ ہوتے تو اسی طرح قیامت تک مچھلی کے پیٹ میں ٹھہرے رہتے اور بغیر کھائے اور پئے زندہ رہتے۔

    رہا ملحدین کا یہ سوال کہ زمین سے لے کر آسمان تک کی طویل مسافت کا چند لمحوں میں طے کر لینا کیسے ممکن ہے؟۔

    سو اس کا جواب یہ ہے کہ حکمائے جدید لکھتے ہیں کہ نور ایک منٹ میں ایک کروڑ بیس لاکھ میل کی مسافت طے کرتا ہے(روشنی ایک منٹ میں4996540.97m/s2 فاصلہ طے کرتی ہے)۔ بجلی ایک منٹ میں پانچ سو مرتبہ زمین کے گرد گھوم سکتی ہے۔ اور بعض ستارے ایک ساعت میں آٹھ لاکھ اسی ہزار میل حرکت کرتے ہیں۔ علاوہ ازیں انسان جس وقت نظر اٹھا کر دیکھتا ہے تو حرکت شعاعی اس قدر سریع ہوتی ہے کہ ایک ہی آن میں آسمان تک پہنچ جاتی ہے۔ اگر یہ آسمان نہ حائل ہوتا تو اور دور تک وصول ممکن تھا۔ نیز جس وقت آفتاب طلوع کرتا ہے تو نور شمس ایک ہی آن میں تمام کرۂ ارضی پر پھیل جاتا ہے۔ حالانکہ سطح ارضی 20363636 فرسخ ہے جیسا کہ سبع شداد صفحہ 40 پر مذکور ہے۔ اور ایک فرسخ تین میل کا ہوتا ہے۔ لہٰذا مجموعہ 61090908 کروڑ میل ہوا(سورج سے زمین کا فاصلہ 92955807 میل ہے۔سورس: www.space.com )۔ حکمائے قدیم کہتے ہیں کہ جتنی دیر میں جرم شمس بتمام طلوع کرتا ہے اتنی دیر میں فلک اعظم کی حرکت 519600لاکھ فرسخ ہوتی ہے۔ اور ہر فرسخ چونکہ تین میل کا ہوتا ہے لہٰذا مجموعہ مسافت 1558800لاکھ میل ہوئی۔ نیز شیاطین اور جنات کا شرق سے لے کر غرب تک آن واحد میں اس قدر طویل مسافت کا طے کر لینا ممکن ہے تو کیا خداوند عالم اور قادر مطلق کے لیے یہ ممکن نہیں کہ وہ کسی خاص بندے کو چند لمحوں میں اس قدر طویل مسافت طے کروا دے؟۔ آصف بن برخیا کا مہینوں کی مسافت سے بلقیس کا تخت سلیمان علیہ السلام کی خدمت میں پلک جھپکنے سے پہلے پہلے حاضر کر دینا قرآن کریم میں مصرع ہے۔ کما قال اللہ تعالیٰ: قَالَ الَّذِي عِندَهُ عِلْمٌ مِّنَ الْكِتَابِ أَنَا آتِيكَ بِهِ قَبْلَ أَن يَرْتَدَّ إِلَيْكَ طَرْفُكَ فَلَمَّا رَآهُ مُسْتَقِرًّا عِندَهُ قَالَ هَٰذَا مِن فَضْلِ رَبِّی(نمل27:40)۔ اسی طرح سلیمان علیہ السلام کے لیے ہوا کا مسخر ہونا بھی قرآن کریم میں مذکور ہے کہ وہ ہوا سلیمان علیہ السلام کے تخت کو جہاں چاہے اڑا کر لے جاتی اور مہینوں کی مسافت گھنٹوں میں طے کرتی۔ کما قال اللہ تعالیٰ: فَسَخَّرْنَا لَهُ الرِّيحَ تَجْرِي بِأَمْرِهِ(ص38:36)۔

    آج کل ملحدین فی گھنٹہ تین سو میل٭٭ کی مسافت طے کرنے والے ہوائی جہاز پر تو ایمان لے آئے ہیں مگر نہ معلوم سلیمان علیہ السلام کے تخت پر بھی ایما لاتے ہیں یا نہیں۔ ہوائی جہاز بندہ کی بنائی ہوئی مشین سے اڑتا ہے اور سلیمان علیہ السلام کے تخت کو ہوا بحکم خداوندی اڑا کے لے جاتی تھی۔ کسی بندہ کے عمل اور صنعت کو اس میں دخل نہ تھا۔ اس لیے وہ معجزہ تھا اور ہوائی جہاز معجزہ نہیں۔

    مرزا صاحب لکھتے ہیں:

    ”نیا اور پُرانا فلسفہ بالاتفاق اس بات کو محال ثابت کرتا ہے کہ کوئی انسان اپنے اس خاکی جسم کے ساتھ کُرَّۂ زَمْہَرِیْر تک بھی پہنچ سکے بلکہ علم طبعی کی نئی تحقیقاتیں اس بات کو ثابت کر چکی ہیں کہ بعض بلند پہاڑوں کی چوٹیوں پر پہنچ کر اس طبقہ کی ہوا ایسی مُضرِّ صحت معلوم ہوئی ہے کہ جس میں زندہ رہنا ممکن نہیں۔ پس اس جسم کا کُرَّۂ ماہتابیا کُرَّۂ آفتاب تک پہنچنا کس قدر لغو خیال ہے“٭٭٭۔(روحانی خزائن جلد ۳- اِزالہ اوھام: صفحہ 126)

    جواب یہ ہے کہ نبی کریم علیہ الصلوۃ وا تسلیم کا لیلۃ المعراج میں اور ملائکۃ اللہ کا لیل و نہار نازیہ اور کرۂ زمہریری سے مرور عبور ممکن ہے۔ اسی طرح حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا بھی عبور و مرور ممکن ہے اور جس راہ سے حضرت آدم علیہ السلام کا ہبوط اور نزول ہوا ہے اسی راہ سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا ہبوط و نزول بھی ممکن ہے۔ حضرت عیسیٰ علیہ السلام پر آسمان سے مائدہ کا نازل ہونا قرآن کریم میں صراحتاً مذکور ہے۔ کما قال اللہ تعالیٰ: إِذْ قَالَ الْحَوَارِيُّونَ يَا عِيسَى ابْنَ مَرْيَمَ هَلْ يَسْتَطِيعُ رَبُّكَ أَن يُنَزِّلَ عَلَيْنَا مَائِدَةً مِّنَ السَّمَاءِ قَالَ اتَّقُوا اللَّهَ إِن كُنتُم مُّؤْمِنِينَ...الی قولہ... قَالَ عِيسَى ابْنُ مَرْيَمَ اللَّهُمَّ رَبَّنَا أَنزِلْ عَلَيْنَا مَائِدَةً مِّنَ السَّمَاءِ تَكُونُ لَنَا عِيدًا لِّأَوَّلِنَا وَآخِرِنَا وَآيَةً مِّنكَ وَارْزُقْنَا وَأَنتَ خَيْرُ الرَّازِقِينَoقَالَ اللَّهُ إِنِّي مُنَزِّلُهَا عَلَيْكُمْ(4المائدہ112تا115) مرزا صاحب کے زعم فاسد اور خیال باطل کی بناء پر اگر وہ نازل ہوا ہو گا تو طبقہ ناریہ کی حرارت اور گرمی سے جل کر خاکستر ہو گیا ہو گا۔ نعوذباﷲ من ہذہ الخرافات! یہ سب شیاطین الانس کے وسوسے ہیں اور انبیاء و مرسلین کی آیات نبوت اور کرامات رسالت پر ایمان نہ لانے کے بہانے ہیں۔ کیا خداوند ذوالجلال عیسیٰ علیہ السلام کے لئے طبقہ ناریہ کو ابراہیم الصلوۃ و السلام کی طرح برد اور سلام نہیں بنا سکتا؟۔ جب کہ اس کی شان یہ ہے:

    انما امرہ اذ اراد شیا ان یقول لہ کن فیکون، فسبحان ذی المک الملکوت و العزۃ الجبروت۔ امنت باللہ و کفرت بالظاغوت۔

    ..................................................................................................................................................................................................................................................
    ٭یہاں مرزا قادیانی کے ان الفاظ کو بھی ملحوظ خاطر رکھا جائے:
    ” بعض لوگ انگد کے جنم ساکھی کے اس بیان پر تعجب کریں گے کہ یہ چولہ آسمان سے نازل ہوا ہے اور خدا نے اس کو اپنے ہاتھ سے لکھا ہے۔ مگر خدا تعالیٰ کی بے انتہا قدرتوں پر نظر کر کے کچھ تعجب کی بات نہیں کیونکہ اس کی قدرتوں کی کسی نے حد بست نہیں کی کون انسان کہہ سکتا ہے کہ خدا کی قدرتیں صرف اتنی ہی ہیں اس سے آگے نہیں۔ ایسے کمزور اور تاریک ایمان تو ان لوگوں کے ہیں جو آج کل نیچری یا برہمو کے نام سے موسوم ہیں“۔(ست بچن صفحہ 37،روحانی خزائن جلد ۱۰- ست بچن: صفحہ 157)
    مرزا قادیانی نے (ست بچن صفحہ52 روحانی خزائن جلد ۱۰- ست بچن: صفحہ 172)پر بابا گورو نانک کے چولہ کی تصویر بھی بنائی ہے۔ ناشر
    ٭٭دنیا کا تیز ترین راکٹ امریکہ کا (X-15) ہے جو 7274کلومیٹر پر گھنٹہ کی رفتار تک جا سکتا ہے۔ سورس: www.livescience.com
    ٭٭٭حوالہ کو خوبخو الفاظ مرزا میں لکھ کر بین القوسین کر دیا گیا ہے۔ ناشر

    • Informative Informative x 1
  2. ‏ اپریل 21, 2015 #2
    حمزہ

    حمزہ رکن عملہ پراجیکٹ ممبر رکن ختم نبوت فورم

    حیات عیسیٰ علیہ الصلوۃ والسلام کی پہلی دلیل


    قال اللہ عزو جل

    فَبِمَا نَقْضِهِم مِّيثَاقَهُمْ وَكُفْرِهِم بِآيَاتِ اللَّهِ وَقَتْلِهِمُ الْأَنبِيَاءَ بِغَيْرِ حَقٍّ وَقَوْلِهِمْ قُلُوبُنَا غُلْفٌ بَلْ طَبَعَ اللَّهُ عَلَيْهَا بِكُفْرِهِمْ فَلَا يُؤْمِنُونَ إِلَّا قَلِيلًاoوَبِكُفْرِهِمْ وَقَوْلِهِمْ عَلَىٰ مَرْيَمَ بُهْتَانًا عَظِيمًاoوَقَوْلِهِمْ إِنَّا قَتَلْنَا الْمَسِيحَ عِيسَى ابْنَ مَرْيَمَ رَسُولَ اللَّهِ وَمَا قَتَلُوهُ وَمَا صَلَبُوهُ وَلَٰكِن شُبِّهَ لَهُمْ ۚ وَإِنَّ الَّذِينَ اخْتَلَفُوا فِيهِ لَفِي شَكٍّ مِّنْهُ مَا لَهُم بِهِ مِنْ عِلْمٍ إِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ وَمَا قَتَلُوهُ يَقِينًاoبَل رَّفَعَهُ اللَّهُ إِلَيْهِ وَكَانَ اللَّهُ عَزِيزًا حَكِيمًا(4النساء آیت155تا158)

    حق جلشانہ نے ان آیات شریفہ میں یہود بے بہبود کے ملعون اور مغضوب اور مطرود و مردود ہونے کے کچھ وجوہ و اسباب ذکر کئے ہیں۔ چنانچہ اللہ فرماتا ہے کہ پس ہم نے یہود کو متعدد وجوہ کی بنا پر مورو لعنت و غضب بنایا:

    1)نقضِ عہد اور میثاق کی وجہ سے 2)اور آیات کی الہیہ اور احکام خداوندیہ کی تکذیب اور انکار کی وجہ سے 3)اور خدا کے پیغمبروں کو بے وجہ محض عناد اور دشمنی کی بنا پر قتل کرنے کی وجہ سے4)اور اس قسم کے متکبرانہ کلمات کے وجہ سے کہ مثلاً ہمارے قلوب علم اور حکمت کے ظرف ہیں، ہمیں تمہاری ہدایت اور ارشاد کی ضرورت نہیں۔ حالانکہ ان کے قلوب علم اور حکمت اور رشد و ہدایت سے بالکل خالی ہیں بلکہ اللہ نے ان کے عناد اور تکبر کی وجہ سے ان کے دلوں پر مہر لگی ہوئی ہے، اندر کا کفر باہر نہیں آ سکتا اور باہر سے کوئی رشد اور ہدایت کا اثر اندر نہیں ہو سکتا۔ پس اس گروہ میں سے کوئی ایمان لانے والا نہیں، کوئی شاذ و نادر جیسے عبداللہؓ بن سلام اور ان کے رفقاء5)اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے ساتھ کفر و عداوت کی وجہ سے 6)اور حضرت مریم علیہ السلام پر عظیم بہتان لگانے کی وجہ سے جو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی اہانت اور تکذیب کو بھی مستلزم ہے۔ اہانت تو اس لیے کہ کسی کی ماں کو زانیہ اور بدکار کہنے کے معنی یہ ہیں کہ وہ شخص ولد الزنا ہے اور العیاذ باللہ! نبی کے حق میں ایسا تصور بھی بد ترین کفر ہے۔ اور تکذیب اس طرح لازم آتی ہے کہ عیسیٰ علیہ السلام کے معجزہ سے حضرت مریم علیہ السلام کی برات اور نزاہت ظاہر ہو چکی ہے اور تہمت لگانا برات اور نزاہت کا صاف انکار کرنا ہے۔7)اور ان کو اس قول کی وجہ سے کہ جو بطور تفاخر کہتے تھے کہ ہم نے مسیح بن مریم جو رسول اللہ ہونے کے مدعی تھے ان کو قتل کر ڈالا۔ نبی کا قتل کرنا بھی کفر ہے بلکہ ارادہ قتل بھی کفر ہے اور پھر اس قتل پر فخر کرنا یہ اس سے بڑھ کر کفر ہے اور حالانکہ کہ ان کا یہ قول کہ ہم نے مسیح بن مریم کو قتل کر ڈالا بالکل غلط ہے۔ ان لوگوں نے نہ ان کو قتل کیا اور نہ سولی چڑھایا، لیکن ان کو اشتباہ ہو گیا اور جو لوگ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے بارے میں اختلاف کرتے ہیں وہ سب شک اور تردو میں پڑے ہوئے ہیں۔ اور ان کے پاس کسی قسم کا کوئی صحیح علم اور صحیح معرفت نہیں سوائے گمان کی پیروی کے کچھ بھی نہیں۔ خوب سمجھ لیں کہ یہ امر قطعی اور یقینی ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو کسی نے قتل نہیں بلکہ اللہ تعالیٰ نے ان کو اپنے طرف یعنی آسمان پر اٹھا لیا اور ایک اور شخص کو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا شبیہ اور ہم شکل بنا دیا اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام سمجھ کر اسی کو قتل کیا اور صلیب پر چڑھایا اور اسی وجہ سے یہود کو اشتباہ ہوا اور پھر اس اشتباہ کی وجہ سے اختلاف ہوا اور یہ سب اللہ کی قدرت اور حکمت سے کوئی بعید نہیں، بے شک اللہ تعالیٰ بڑا غالب اور حکمت والا ہے کہ اپنی قدرت اور حکمت سے اپنے نبی کو دشمنوں سے بچا لیا اور زندہ آسمان پر اٹھایا اور ان کی جگہ ایک شخص کو ان کے ہم شکل بنا کر قتل کرایا اور تمام قاتلین کو قیامت تک اشتباہ اور اختلاف میں ڈال دیا۔

    تفصیل

    امید واثق ہے کہ ناظرین اس اجمالی تفسیر سے سمجھ گئے ہوں گے کہ یہ آیات شریفہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے رفع جسمی میں نص صریح ہیں۔ اب ہم کسی قدر تفصیل کرنا چاہتے ہیں تاکہ طالبان حق کی بفضل خدا پوری تشفی اور تسلی ہو جائے ورنہ ہم کیا اور ہماری مجال کیا۔ اور ہم کیا اور ہماری تحریر کیا کہ جس سے تسلی اور تشفی کر سکیں لَا حَوْلَ وَلَا قُوَّةَ إِلَّا بِاللَّهِ۔ قلوب اسی کے قبضہ قدرت میں ہیں جس طرح چاہے اور جدھر چاہے دلوں کو پلٹتا اور پھیرتا ہے۔ اسی کی توفیق سے اپنے لیے اور ناظرین کے لیے اسی کی توفیق اور دست گیری کی امید رکھتا ہوں اور اسی کی اعانت اور تائید سے ناظرین اور قارئین کی تعلیم و تفہیم کے لیے چند امور ذکر کرتا ہوں۔

    (۱)
    ان آیات میں یہود بے بہبود پر لعنت کے جن اسباب کو ذکر فرمایا، ان میں ایک یہ ہے:وقولهم على مريم بهتانا عظيما(4:156) یعنی حضرت مریم پر طوفان اور بہتان لگانا۔ اس طوفان اور بہتان عظیم میں مرزا صاحب کا قدم یہود سے کہیں آگے ہے۔ مرزا صاحب نے اپنی کتابوں میں حضرت مریم علیہ السلام پر جو بہتان کا طوفان برپا کیا ہے، یہود کی کتابوں میں اس کا چالیسواں حصہ بھی نہ ملے گا۔ مرزا صاحب کی عبارتیں نقل کرنے کی ضرورت نہیں، عیاں راچہ بیان۔ ہم سے تو مرزا صاحب کی وہ عبارتیں پڑھی بھی نہیں جاتیں اور مرزائیوں کو تو قرآن کی طرح یاد ہیں، بلکہ اس سے بھی بڑھ کر۔ اس لیے ان کے نقل کی ضرورت نہیں۔

    (۲)

    آیات کا سیاق و سباق بلکہ سارا قرآن روز روشن کی طرح اس امر کی شہادت دے رہا ہے کہ یہود بہبود کی ملعونیت اور مغضوبیت کا اصل سبب حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی عداوت اور دشمنی ہے۔ مرزا صاحب اور مرزائی جماعت کی زبان اور قلم سے حضرت مسیح علیہ الصلوۃ والسلام کے بغض اور عداوت کا جو منظر دنیا نے دیکھا ہے وہ یہود کے وہم و گمان سے بالاتر ہے۔ مرزا صاحب کے لفظ لفظ سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی دشمنی ٹپکتی ہے۔

    قَدْ بَدَتِ الْبَغْضَاءُ مِنْ أَفْوَاهِهِمْ وَمَا تُخْفِي صُدُورُهُمْ أَكْبَرُ(ال عمران 3:118)
    ترجمہ: انتہائی بغض اور عداوت خود بخود ان کے منہ سے ظاہر ہو رہی ہے اور عداوت ان کے سینوں میں مخفی اور پوشیدہ ہے، وہ تمہارے خواب و خیال سے کہیں زیادہ ہے۔

    مرزا صاحب نے نصاریٰ کے الزام کے بہانہ سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی شان میں دل کی عداوت دل کھول کر نکالی جس کے تصور سے بھی کلیجہ شق ہوتا ہے۔
  3. ‏ اپریل 22, 2015 #3
    حمزہ

    حمزہ رکن عملہ پراجیکٹ ممبر رکن ختم نبوت فورم

    (۳)
    پہلی آیت میں وَقَتْلِهِمُ الْأَنبِيَاءَ بِغَيْرِ حَقٍّ فرمایا۔ یعنی انبیاء کو قتل کرنے کی وجہ سے ملعون اور مغضوب ہوئے اور اس آیت میں وَقَوْلِهِمْ إِنَّا قَتَلْنَا الْمَسِيحَ فرمایا۔ یعنی اس کہنے کی وجہ سے کہ ہم نے مسیح کو قتل کر ڈالا۔ معلوم ہوا کہ محض قول ہی قول اور قتل کا محض زبانی دعویٰ ہے۔ اگر دیگر انبیاء کی طرح حضرت مسیح واقع میں مقتول ہوئے تھے تو جس طرح پہلی آیت میں وقتلهم الأنبياء فرمایا تھا اسی طرح اس میں آیت میں و قتلھم و صلبھم المسیح عیسیٰ بن مریم رسول اللہ فرماتا۔ پہلی آیت میں لعنت کا سبب قتل انبیاء ذکر فرمایا اور دوسری میں لعنت کا یہ سبب ان کا ایک قول بتلایا۔ یعنی ان کا یہ کہنا کہ ہم نے مسیح عیسیٰ بن مریم کو قتل کر ڈالا۔ معلوم ہوا کہ جو شخص یہ کہے کہ مسیح ابن مریم مقتول اور مصلوب ہوئے وہ بلاشبہ ملعون اور مغضوب ہے۔ نیز اس آیت میں حضرت مسیح علیہ السلام کے دعویٰ قتل کو بیان کر کے بل رفعہ اللہ فرمایا اور انبیاء سابقین کے قتل کو بیان کرکے بل رفعھم اللہ نہیں فرمایا۔ حالانکہ قتل کے بعد ان کی ارواح طیبہ آسمان پر اٹھا لی گئیں۔

    (۴)
    اس مقام پر حق جلشانہ نے دو لفظ استعمال فرمائے۔ ایک ما قتلوہ جس میں قتل کی نفی فرمائی۔ دوسرا وما صلبوہ جس میں صلیب پر چڑھائے جانے کی نفی فرمائی۔ اس لیے کہ اگر فقط وما قتلوہ فرماتا تو یہ احتمال رہ جاتا کہ ممکن ہے قتل نہ کیے گئے ہوں لیکن صلیب پر چڑھائے گئے ہوں۔ اور علیٰ ہذا اگر فقط وما صلبوہ فرماتے تو یہ احتمال رہ جاتا کہ ممکن ہے صلیب تو نہ دیے گئے ہوں لیکن قتل کر دیے گئے ہوں۔ علاوہ ازیں بعض مرتبہ یہود ایسا بھی کرتے تھے کہ اول قتل کرتے اور پھر صلیب پر چڑھاتے۔ اس لیے حق تعالیٰ شانہ نے قتل اور صلیب کو علیحدہ علیحدہ ذکر فرمایا اور پھر ما قتلوہ اور پھر ما صلبوہ فرمایا کہ ہر ایک کی نفی اور ہر ایک کا جداگانہ مستقلاً رد ہو جائے اور خوب واضح ہو جائے کہ ہلاکت کی کوئی صورت ہی پیش نہیں آئی نہ مقتول ہوئے اور نہ مصلوب ہوئے اور نہ قتل کرکے صلیب پر لٹکائے گئے۔ دشمنوں نے ایڑی چوٹی کا سارا زور ختم کر دیا مگر سب بے کار گیا۔ قادر توانا جس کو بچانا چاہے اسے کون ہلاک کر سکتا ہے۔

    کہ زور آورد گر تو یاری دہی
    کہ گیرد چو تو رستگاری دہی

    مرزائی جماعت کا یہ خیال ہے کہ اس آیت میں مطلق قتل اور صلب کی نفی مراد نہیں بلکہ ذلت اور لعنت کی موت کی نفی مراد ہے۔ جواب یہ ہے کہ یہ محض وسوسہ شیطانی ہے جس پر کوئی دلیل نہیں۔ اور اگر یہ کہا جائے کہ یہود کے خیال کی تردید ہے تو تب بھی آیت میں یہود کا پورا رد ہے۔ اس لیے کہ یہود کا گمان یہ تھا کہ عیسیٰ علیہ السلام العیاذ باللہ جھوٹے نبی ہیں اور جھوٹا نبی ضرور قتل ہوتا ہے، تو اللہ تعالیٰ اس کے جواب میں فرماتا ہے کہ وہ قتل بھی نہیں کیے گئے اور نہ صلیب پر چڑھائے گئے، اس لیے کہ وہ خدا کے سچے نبی تھے۔ علاوہ ازیں اگر یہود کے اس عزم کی رعایت کی جائے تو وَقَتْلِهِمُ الْأَنبِيَاءَ بِغَيْرِ حَقٍّ اور يَقْتُلُونَ النَّبِيِّينَ کے یہ معنی ہونے چاہیں کے معاذ اللہ وہ انبیاء ذلت اور لعنت کی موت مرے۔

    كَبُرَتْ كَلِمَةً تَخْرُجُ مِنْ أَفْوَاهِهِمْ إِن يَقُولُونَ إِلَّا كَذِبًا(الکہف18:5)
لڑی کی کیفیت :
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں

اس صفحے کی تشہیر